Wednesday , November 22 2017
Home / شہر کی خبریں / ڈاکٹر کے کیشو راؤ اور ڈی سرینواس سرکاری اراضی خریداری میں ملوث

ڈاکٹر کے کیشو راؤ اور ڈی سرینواس سرکاری اراضی خریداری میں ملوث

حکومت پریشان حال ، سی بی آئی تحقیقات پر زور ، محکمہ مال سے رجسٹریشن کی ہدایت
حیدرآباد ۔ 14 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : کانگریس سے ٹی آر ایس میں شامل ہونے والے سینئیر قائدین ڈاکٹر کے کیشو راؤ اور ڈی سرینواس راؤ سرکاری اراضیات خریدتے ہوئے حکومت کی پریشانیوں میں مزید اضافہ کردیا ہے ۔ اپوزیشن کی جانب سے چیف منسٹر کی سرپرستی میں اسکام ہونے کا الزام عائد کرتے ہوئے اس کی سی بی آئی تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا جارہا ہے ۔ شہر کے چار مقامات پر ہزاروں کروڑہا روپئے کا اراضی اسکام ہونے کا دعویٰ کرتے ہوئے اپوزیشن جماعتیں اس کی سی بی آئی تحقیقات کرانے کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاج کررہے ہیں ۔ چیف منسٹر نے دو مرتبہ اس کا جائزہ لیتے ہوئے واضح کردیا کہ ایک انچ بھی سرکاری اراضی پر کوئی قبضہ نہیں ہوا اور نہ ہی ایک روپیہ کا سرکاری خزانے کو نقصان پہونچا ہے ۔ تاہم میڑچل ضلع کے گرماپور میں مختص کردہ سرکاری اراضی ٹی آر ایس کے رکن راجیہ سبھا ڈی سرینواس نے خریدی ہے ۔ قبل ازیں اس اراضی کو خریدنے کی کئی افراد نے کوشش کی تھی تاہم عہدیداروں نے اس کو سرکاری اراضی قرار دیتے ہوئے رجسٹریشن کرنے سے انکار کردیا تھا تاہم حکمران جماعت کے قائد ڈی سرینواس کی جانب سے اراضی خریدنے پر عہدیداروں نے فوری اس اراضی جس کا سروے نمبر 221 ہے جس کے تحت 89 ایکڑ اراضی ہے جس میں 4 ایکڑ اراضی ڈی سرینواس اور 2 ایکڑ اراضی ان کے حامی وی ستیہ نارائنا کے نام پر 2015 میں رجسٹریشن کردی گئی اس اراضی کی مارکٹ قیمت 4 کروڑ بتائی جاتی ہے ۔ ضلع رنگاریڈی کے ابراہیم پٹنم منڈل میں ٹی آر ایس کے سکریٹری جنرل و رکن راجیہ سبھا ڈاکٹر کے کیشو راؤ کے ارکان خاندان نے اراضی اسکام کے اصل مجرم گولڈاسٹون کمپنی سے 38 ایکڑ جنگلاتی اراضی خریدی تھی اس اراضی کا رجسٹریشن کرنے والے سب رجسٹرار کو معطل کردیا گیا ہے ۔ جب یہ اراضی تنازعہ منظر عام پر آیا تو ڈاکٹر کے کیشو راؤ نے جنگلاتی سرکاری اراضی خریدنے کی تردید کی ہے اور یہ دعویٰ کیا ہے کہ ہائی کورٹ کی ڈگری کو مد نظر رکھتے ہوئے اراضی کا رجسٹریشن کرایا گیا ہے تاہم باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ مقامی محکمہ مال کے عہدیداروں نے اراضی کا رجسٹریشن منسوخ کرنے کی حکومت سے سفارش کی ہے ۔ ڈاکٹر کے کیشو راؤ نے رجسٹری منسوخ کرنے پر عدالت سے رجوع ہونے کا اشارہ دیا ہے ۔ محکمہ مال کے عہدیداروں سے اس بات کی تصدیق ہوگئی ہے کہ یہ سرکاری اراضی ہے ۔ اس طرح دوسری جماعتوں سے ٹی آر ایس میں شامل ہونے والے قائدین کی بے قاعدگیوں سے حکومت ٹی آر ایس کی نیک نامی متاثر ہورہی ہے اور اپوزیشن کو حکومت پر تنقیدیں کرنے کا موقع مل رہا ہے ۔ چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر نے بے قاعدگیوں میں ملوث ہونے والوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے کا انتباہ دیا ہے دیکھنا وہ ڈی سرینواس اور ڈاکٹر کے کیشو راؤ کے معاملے میں کیا فیصلہ کرتے ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT