Tuesday , November 20 2018
Home / شہر کی خبریں / ڈبل بیڈ روم مکانات اور فیس باز ادائیگی کا مطالبہ

ڈبل بیڈ روم مکانات اور فیس باز ادائیگی کا مطالبہ

ٹی آر ایس پارٹی پر عوام کو دھوکہ دینے کا الزام ، حیدرآباد کلکٹوریٹ پر بائیں بازو جماعتوں کا احتجاج
حیدرآباد ۔ 22 ۔ جنوری : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ حکومت کی جانب سے غریب و پسماندہ افراد کے لیے ڈبل بیڈ روم مکانات طلبہ وطالبات کے لیے فیس باز ادائیگی کی عدم فراہمی پر بائیں بازو سیاسی جماعتیں سی پی آئی ، سی پی ایم اور دیگر سیاسی جماعتوں نے آج بڑے پیمانے پر 1500 سے زائد مرد و خواتین کے ساتھ ضلع کلکٹر آفس حیدرآباد نامپلی پر پہنچ کر احتجاجی دھرنا منظم کیا ۔ تقریبا دو گھنٹے تک سڑکوں پر بیٹھ کر احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ پر الزام عائد کیا کہ انتخابات سے قبل انہوں نے وعدہ کیا تھا کہ غریب و مستحق خاندانوں میں مکانات پٹہ جات کی فراہمی ، طلبہ وطالبات کے لیے فیس باز ادائیگی اور کے جی تا پی جی مفت تعلیم فراہم کریں گے ۔ تاہم تین سال 8 ماہ کا عرصہ گذر جانے کے بعد بھی اس پر کوئی عمل آوری نہیں کی جارہی ہے ۔ جس سے غریب خاندان کے افراد بری طرح سے متاثر ہورہے ہیں اور کئی نوجوان تعلیمی دور میں تعلیم سے محروم ہورہے ہیں اور یہ نوجوان غلط راستہ اختیار کررہے ہیں ۔ گذشتہ حیدرآباد کے بلدیہ انتخابات سے قبل کے سی آر نے دوبارہ غریبوں کو اس بات کا دلاسہ دیا تھا کہ ٹی آر ایس پارٹی کے امیدواروں کو بھاری اکثریت سے کامیاب بنائیں ۔ ڈبل بیڈ روم مکانات فراہم کریں گے ۔ چنانچہ مجلس بلدیہ کے انتخابات ہو کر دیڑھ سال کا عرصہ گذر چکا ہے نہ ہی کسی کو مکانات کے دستاویزات حاصل ہوئے اور نہ ہی پٹہ جات حاصل ہوئے ۔ کے سی آر صرف غریب افراد کے جذبات و احساسات سے کھلواڑ کررہے ہیں اور انہیں ووٹ بینک کے طور پر استعمال کرتے ہوئے سیاسی فائدہ حاصل کررہے ہیں ۔ سینکڑوں افراد نے اس احتجاجی دھرنا میں حصہ لیا ۔ اور کلکٹریٹ کے باب الداخلہ پر درخواستیں جمع کر کے ایم آر او کے ذریعہ حیدرآباد کلکٹر یوگیتا رانا کے حوالے کیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT