Wednesday , December 13 2017
Home / دنیا / کابل میں طالبان کے تین حملے ،دس پولیس ملازمین ہلاک

کابل میں طالبان کے تین حملے ،دس پولیس ملازمین ہلاک

افغان پولیس ٹریننگ سنٹر پر خودکش بم حملے
کابل ۔ 17 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) افغان عہدیداروں کے مطابق طالبان نے ملک کے جنوبی، مغربی اور مشرقی علاقوں میں پے در پے حملے کرتے ہوئے کم و بیش 10 پولیس ملازمین کو ہلاک کردیا۔ جنوبی صوبہ غزنی میں شورش پسندوں نے ایک سیکوریٹی کمپاؤنڈ کو نشانہ بنایا جس کیلئے ایک کار کا استعمال کیا گیا تھا اور اس طرح اس حملے میں 7 پولیس ملازمین ہلاک ہوئے۔ صوبائی پولیس سربراہ محمد زماں نے بتایا کہ اندار ڈسٹرکٹ میں کئے گئے حملے کے بعد اس وقت تک لڑائی جاری رہی جب تک کہ حملہ آور وہاں سے فرار ہوگئے۔ مسٹر زمان نے کہا کہ اس وقت ڈسٹرکٹ کمپاؤنڈ پوری طرح سے تباہ ہوچکا ہے۔ مغربی فرح صوبہ میں پولیس سربراہ عبدالمعروف فولاد نے بتایا کہ شیخو ڈسٹرکٹ میں طالبان نے ایک سرکاری کمپاؤنڈ کو نشانہ بنایا جس میں تین پولیس ملازمین ہلاک ہوگئے۔ تمام حملوں کی ذمہ داری طالبان نے قبول کی ہے۔ خودکش بمباروں اور بندوق برداروں نے آج ایک پولیس ٹریننگ سنٹر کو نشانہ بنیا، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہیکہ جنگ زدہ افغانستان میں تشدد کے واقعات میں کوئی کمی نہیں ہوئی ہے۔ صوبہ پکٹیا کے دارالخلافہ گردیز جس کی سرحد پاکستان سے ملتی ہے، میں کئے گئے حملے کی طالبان نے ایک ٹوئیٹ کے ذریعہ ذمہ داری قبول کی ہے۔ دریں اثناء وزارت داخلہ کی جانب سے جاری کئے گئے ایک بیان میں بتایا گیا کہ ابتداء میں ایک خودکش بمبار نے ٹریننگ سنٹر کے قریب دھماکو مادوں سے بھری ایک کار کو دھماکہ سے اڑا دیا جس کے بعد افراتفری میں حملہ آوروں کو مزید حملے کرنے کا ایک اور موقع مل گیا۔ تادم تحریر ٹریننگ سنٹر کے اندر حملہ آوروں اور سیکوریٹی فورسیس کے درمیان فائرنگ کے تبادلہ کا سلسلہ جاری ہے۔ حملہ آور بندوقوں اور خودکش ویسٹس سے لیس ہیں۔ اب تک 32 ہلاکتوں کی اطلاع ہے۔ ایک مقامی آفیسر کے مطابق نیشنل پولیس بارڈر پولیس اور افغان نیشنل آرمی کے جہاں ہیڈکوارٹرس واقع ہیں اس کمپاونڈ کے قریب دو کار بم دھماکے کئے گئے جس کے بعد سے ہی فائرنگ کا تبادلہ شروع ہوگیا جو ہنوز جاری ہے۔

TOPPOPULARRECENT