Wednesday , September 19 2018
Home / Top Stories / کابل کے شیعہ علاقہ میں خودکش دھماکہ، 9ہلاک

کابل کے شیعہ علاقہ میں خودکش دھماکہ، 9ہلاک

مہلوکین میں دو پولیس ملازمین بھی شامل ، کسی نے بھی حملہ کی ذمہ داری قبول نہیں کی
کابل ۔ 9 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) افغان دارالحکومت میں ایک تازہ ترین حملہ میں ایک شیعہ علاقہ میں ایک خودکش بمبار دھماکہ میں کم سے کم 9 افراد ہلاک ہوگئے۔ وزارت داخلہ کے ترجمان نجیب دانش نے فیس بک پر لکھا کہ ’’دھماکہ میں 9 ہلاک اور دیگر 7زخمی ہوگئے‘‘۔ پیادہ خودکش بمبار کے دھماکے میں ہلاک ہونے والوں میں ایک ملازم پولیس بھی شامل ہے۔ طالبان حملے میں ہلاک شیعہ ہزارہ فرقہ کے ایک رہنما عبدالعلی مزاری کی 23 ویں برسی کے موقع پر جمع ہجوم کے قریب یہ دھماکہ کیا گیا تھا۔ پولیس کے سربراہ محمدداؤد امین نے ٹولونیوز سے کہا کہ تلاشی مرکز کے پاس پولیس کی طرف سے نشاندہی کے بعد اس بمبار نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ داود امین نے ’’یہ خودکش بمبار ہجوم کو نشانہ بنانے کیلئے اندر پہنچنے میں ناکام ہوگیا تھا‘‘۔ اس حملے کی کسی بھی گروپ نے اگرچہ فوری طور پر ذمہ داری قبول نہیں کی ہے لیکن راست امن بات چیت کیلئے حکومت کی طرف سے کی گئی پیشکش کو قبول کرنے طالبان پر بڑھتے ہوئے دباؤکے دوران یہ حملہ ہوا ہے۔ افغانستان صدر اشرف غنی نے تخریب کاروں سے بات چیت کیلئے گذشتہ ہفتہ کابل میں منعقدہ ایک بین الاقوامی کانفرنس میں ایک منصوبہ کا اعلان کیا تھا جس میں طالبان کو ایک سیاسی جماعت کی حیثیت سے تسلیم کرنا بھی شامل ہے۔ اس کے عوض عسکریت پسندوں کیلئے حکومت اور دستور کو تسلیم کرنے کی شرط بھی دی گئی تھی۔ صدر افغانستان اشرف غنی نے کابل میں منعقدہ بین الاقوامی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے طالبان سے بات چیت کیلئے اپنے کھلے منصوبہ کا اعلان کیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT