Monday , June 18 2018
Home / دنیا / کالا دھن:کسی کو ’بچانا ‘ یو پی اے کی کوشش رہی

کالا دھن:کسی کو ’بچانا ‘ یو پی اے کی کوشش رہی

نئی دہلی۔ 3 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی نے آج سابقہ یو پی اے حکومت کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس نے کالے دھن کے بارے میں ایس آئی ٹی تشکیل نہیں دی کیونکہ ’’کسی کو بچانے ‘‘ کی کوشش ہوئی اور ایسی باتوں کو مسترد کردیا کہ ان کی حکومت اس مسئلہ پر اپوزیشن کو دھمکارہی ہے۔ انہوں نے اپوزیشن کے یہ الزام کو بھی مسترد کردیا کہ ان ک

نئی دہلی۔ 3 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی نے آج سابقہ یو پی اے حکومت کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس نے کالے دھن کے بارے میں ایس آئی ٹی تشکیل نہیں دی کیونکہ ’’کسی کو بچانے ‘‘ کی کوشش ہوئی اور ایسی باتوں کو مسترد کردیا کہ ان کی حکومت اس مسئلہ پر اپوزیشن کو دھمکارہی ہے۔ انہوں نے اپوزیشن کے یہ الزام کو بھی مسترد کردیا کہ ان کی حکومت موافق کارپوریٹ یا موافق امیر طبقہ ہے جبکہ انہوں نے متعدد اسکیمات کا حوالہ دیا جیسے سوچھ بھارت مشن ، سب کیلئے امکنہ، سرکاری اسکولوں کیلئے بیت الخلاء اور جن دھن ،اور یہ استفسار کیا کہ آیا یہ اسکیمات امیروں کے فائدے کیلئے یا غریبوں کیلئے۔ راجیہ سبھا میں صدر جمہوریہ کے خطبہ پر تحریک تشکر کا ایک گھنٹہ طویل جواب دیتے ہوئے وزیراعظم نے کالے دھن کے مسئلہ پر بات کی جس کے بارے میں ان کی حکومت سے سوالات پوچھے جارہے ہیں کہ گزشتہ 9 ماہ میں کیا ہوا ہے۔

وزیراعظم نے کہا ،’’میرا ماننا ہے کہ کالا دھن واپس لانے کا خواب اب تک ممکن ہوگیا ہوتا اگر ایس آئی ٹی 2011 ء میں تشکیل دیدی گئی ہوتی جب سپریم کورٹ نے اس کیلئے کہا تھا۔ اس وقت ایس آئی ٹی تشکیل نہیں دی گئی کیونکہ کسی کو بچانے کی کوشش ہورہی تھی‘‘۔ مودی نے کانگریس لیڈر آنند شرما کے الزام کو مسترد کردیا کہ حکومت کالا دھن کالے کھاتہ داروں کے ناموں کا افشاء کرنے کے نام پر اپوزیشن کو دھمکا رہی ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ وہ دیگر لوگوں کو دھمکانے کی ذہنیت نہیں رکھتے کیونکہ یہ کبھی بھی جمہوریت میں کارکرد ن ہیں ہوتی اور کبھی ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ قانون کو اپنا کام کرنے دینا چاہئے۔ انہوں نے یاد دہانی کرائی کہ کس طرح انہیں جب وہ چیف منسٹر گجرات تھے، جیل بھیج دینے کی دھمکیاں دی گئیں۔ وزیراعظم مودی نے نئے چیف منسٹر جموں و کشمیر مفتی محمد سعید کے متنازعہ ریمارکس کو واضح طور پر مسترد کردیا اور کہا کہ اس ریاست کی بی جے پی ۔ پی ڈی پی حکومت دونوں پارٹیوں کی جانب سے ترتیب شدہ مشترک اقل ترین پروگرام کی اساس پر چلائی جائے گی اور دہشت گردی کو بالکلیہ برداشت نہیں کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ایسے ریمارکس کوئی بھی کرے وہ قابل قبول نہیں۔

TOPPOPULARRECENT