Saturday , September 22 2018
Home / اضلاع کی خبریں / کاماریڈی کو ضلع بنانے کیلئے عوامی تحریک پر زور

کاماریڈی کو ضلع بنانے کیلئے عوامی تحریک پر زور

کاماریڈی:5؍ جولائی ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) کاماریڈی کو ضلع مستقر قرار دینے کیلئے کانگریس کارکنوں کی جانب سے عوامی تحریک چلانے کیلئے کمربستہ ہوجائیں۔ ان خیالات کا اظہار ایم ایل سی محمد علی شبیر کل ماچہ ریڈی میں منڈل پرجا پریشد، نائب صدر منڈل پریشد، کوآپشن ممبر کے انتخابات کے بعد منڈل پرجا پریشد کے ہنگامی اجلاس سے مخاطب کرتے ہوئے کیا۔

کاماریڈی:5؍ جولائی ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) کاماریڈی کو ضلع مستقر قرار دینے کیلئے کانگریس کارکنوں کی جانب سے عوامی تحریک چلانے کیلئے کمربستہ ہوجائیں۔ ان خیالات کا اظہار ایم ایل سی محمد علی شبیر کل ماچہ ریڈی میں منڈل پرجا پریشد، نائب صدر منڈل پریشد، کوآپشن ممبر کے انتخابات کے بعد منڈل پرجا پریشد کے ہنگامی اجلاس سے مخاطب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ صدر کل ہند کانگریس شریمتی سونیا گاندھی سے اظہار تشکر کرتے ہوئے منڈ پرجا پریشد کے اجلاس میں قرار داد کرنے پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ سونیا گاندھی کے فیصلے کی وجہ سے کانگریس کو سیما آندھرا تلنگانہ میں شدید نقصان ہوا ہے اور سونیا گاندھی کی قربانی ہمیشہ یاد رہے گی۔ تلنگانہ کے حصول کیلئے کئی طلباء اور نوجوانوں نے اپنی جان کی قربانی دی ہے اور اس بات کو محسوس کرتے ہوئے سونیا گاندھی نے علیحدہ تلنگانہ کے قیام کا فیصلہ کیا ہے چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر رائو کاماریڈی کو میدک میں شامل کرنے کے غور کے بارے میں شدید احتجاج کرتے ہوئے کاماریڈی کو ضلع مستقر قرار دینے کیلئے عوامی تحریک شروع کرنے کا اور اس کیلئے کانگریس کارکن کمربستہ ہوجائیں ۔ بانسواڑہ، جکل، یلاریڈی حلقوں کو میدک ضلع میں شامل کئے جانے کے بارے میں غور کئے جانے کے فیصلے سے دستبرداری کرنے کا مطالبہ کیا۔ میدک میں ریلوے اسٹیشن، یونیورسٹی، قومی شاہراہ آبی سہولتیں بھی فراہم نہیں ہے اور ہر طرح کی سہولت ہے اور کاماریڈی کی عوام خاموش تماشائی نہیں رہے گی۔ شہیدان تلنگانہ کی قربانیوں کو رائیگاں ہونے نہیں دیا جائیگا۔ ان کے افراد خاندان کی باز آبادکاری کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے چندر شیکھر رائو کی جانب سے تلنگانہ تحریک شروع کرنے سے قبل ہی تلنگانہ تحریک جاری تھی ایک ماہ کا عرصہ گذرنے کے باوجود بھی شہیدان تلنگانہ کے بارے میں ابھی تک کوئی منصوبہ بندی نہیں کی جارہی ہے مسٹر شبیر علی نے کہا کہ موسم بارش کے ایک ماہ کا وقفہ گذر نے کے باوجود بھی بارش نہیں ہورہی ہے متبادل فصلوں کی کاشت کیلئے حکومت کی جانب سے منصوبہ بندی کرتے ہوئے کسانوں کو واقف کروانے کے قرضہ جات کی معافی کے علاوہ دیگر اقدامات کرنے کیلئے حکومت سے مطالبہ کیا ۔ برقی کی سربراہی کو باقاعدہ کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔ کانگریس 2004 ء میں کسانوں کو قرضہ جات معاف کرنے کا اعزاز کانگریس کو حاصل ہے ۔مسٹر شبیر علی نے کہا کہ ماچہ ریڈی میں کانگریس کی کامیابی پر منڈل پرجا پریشد کے فنڈ کے علاوہ ایم ایل سی فنڈ ماچہ ریڈی منڈل میں استعمال کرنے کا ارادہ ظاہر کیااس موقع پر منڈل پرجا پریشد کے صدر نرسنگ رائو، نائب صدر بانود پھول چند نائیک، کوآپشن ممبرامتیاز علی و دیگر بھی موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT