Monday , July 16 2018
Home / شہر کی خبریں / کانگریس اور تلگودیشم کو کسانوں کی بھلائی سے کوئی دلچسپی نہیں

کانگریس اور تلگودیشم کو کسانوں کی بھلائی سے کوئی دلچسپی نہیں

رعیتو بندھو اسکیم ملک میں منفرد، ٹی آر ایس ارکان مقننہ کی پریس کانفرنس

حیدرآباد۔/12 مئی، ( سیاست نیوز) تلنگانہ راشٹرا سمیتی نے الزام عائد کیا کہ کانگریس اور تلگودیشم کو کسانوں کی بھلائی پر بات کرنے کا کوئی حق نہیں ہے کیونکہ دونوں نے اپنے دورِ حکومت میں کسانوں کی بھلائی کو یکسر فراموش کردیا تھا۔ ارکان مقننہ کے پربھاکر، سرینواس ریڈی اور تلنگانہ انڈسٹریل انفراسٹرکچر کارپوریشن کے صدرنشین جی بالاملو نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن جماعتیں کسانوں کی بھلائی کو دیکھ کر برداشت نہیںکرپارہی ہیں اور اسکیمات میں بے بنیاد الزامات عائد کرنا ان کی بوکھلاہٹ کو ظاہر کرتا ہے۔ ارکان مقننہ نے سوال کیا کہ آیا تلگودیشم اور کانگریس نے کبھی اس طرح کی اسکیمات کا تصور کیا تھا۔؟ دونوں کے دور حکومت میں کسان معاشی طور پر پریشان حال رہے اور خودکشی کے واقعات پیش آئے۔ چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ نے تین برسوں میں کسانوں کی بدحالی کو خوشحالی میں تبدیل کردیا اور آج کسان اپنی فصلوں کو بونے کیلئے فی ایکر 4 ہزار روپئے حاصل کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی کسی اور ریاست میں اس طرح کی اسکیم نہیں ہے۔ کے پربھاکر نے کہا کہ ریاست بھر میں کسانوں کیلئے امدادی رقم کی تقسیم کا ہر سطح پر خیرمقدم کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کو ان کی اراضی کی ملکیت کے پٹہ جات پاس بک کی اجرائی سے مستقل طور پر ملکیت کا مسئلہ حل ہورہا ہے۔ کسان کئی برسوں سے ان اسکیمات کا خواب دیکھ رہے تھے جسے کے سی آر نے پورا کیا۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی دیگر ریاستیں تلنگانہ کی اسکیمات کو اختیار کرنے پر مجبور ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی نے کرناٹک میں جو انتخابی منشور جاری کیا ہے اس میں تلنگانہ کی کئی اسکیمات کو شامل کیا گیا۔ پربھاکر نے کہا کہ مرکزی حکومت نے کسانوں کی بھلائی کیلئے کچھ نہیںکیا جبکہ تلنگانہ حکومت انہیں تحفظ فراہم کررہی ہے۔ ٹی آر ایس ارکان مقننہ نے مرکز کی ’’ منریگا ‘‘ اسکیم میں زراعت کو شامل کرنے کا مطالبہ کیا۔ گجرات اور مدھیہ پردیش میں کسانوں کیلئے بعض اسکیمات پر عمل کیا جارہا ہے لیکن اس کے فوائد تلنگانہ کی طرح نہیں ہیں۔ انہوں نے تلنگانہ بی جے پی قائدین کو مشورہ دیا کہ وہ حکومت پر الزام تراشی کے بجائے حقائق کو تسلیم کریں۔ ٹی آر ایس ارکان مقننہ نے کہا کہ اپوزیشن کی الزام تراشی سے عوام گمراہ نہیں ہوں گے اور آئندہ انتخابات میں ٹی آر ایس دوبارہ برسراقتدار آئے گی۔

TOPPOPULARRECENT