Monday , July 16 2018
Home / Top Stories / کانگریس بس یاترا کے تیسرے مرحلہ کا 13 مئی سے آغاز

کانگریس بس یاترا کے تیسرے مرحلہ کا 13 مئی سے آغاز

سوشیل میڈیا کا بھی استعمال،اُتم کمار ریڈی کا لائیو خطاب

حیدرآباد /11 مئی ( سیاست نیوز ) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اُتم کمار ریڈی نے کہا کہ 13 مئی کو منچریال سے کانگریس کی پرجا چیتنیہ بس یاترا کے تیسرے مرحلے کا آغاز ہوگا ۔ رات 9 تا 10 بجے تک فیس بک لائیو سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس قائدین اور کارکنوں سے ٹی آر ایس کو اقتدار سے بے دخل کرنے کیلئے کمربستہ ہوجانے کا مشورہ دیا ۔ اُتم کمار ریڈی گذشتہ دیڑھ دو ماہ سے سوشیل میڈیا کا بھرپور استعمال کرتے ہوئے اپنی بات کو عوام تک پہونچا رہے ہیں ۔ آج رات 9 تا 10 بجے تک فیس بک پر لائیو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 4 سال تک زرعی شعبہ کو نظر انداز کردیا گیا ۔ حکومت کے غلط فیصلوں سے 4 ہزار سے زائد کسانوں نے خودکشی کی ہے ۔ کسانوں میں پائی جانے والی ناراضگی اور غم و غصے کو دور کرنے کیلئے انتخابات سے ایک سال قبل فی ایکر 4 ہزار روپئے کے حساب سے ریتو بندھو اسکیم کا آغاز کیا ہے ۔ جو سوائے سیاسی مفاد پرستی کے کسانوں سے ہمدردی نہیں ہے ۔ اس اسکیم کی تشہیر کیلئے حکومت نے عوامی دولت کا بیجا استعمال کرتے ہوئے سارے ملک کے مختلف زبانوں کے اخبارات میں سینکڑوں کروڑ روپئے کے اشتہارات شائع کئے ہیں ۔ اپنی شخصی تشہیر کیلئے عوامی دولت لوٹانے والے چیف منسٹر کے سی آر کو عوام اور کسان ہرگز معاف نہیں کریں گے ۔ اُتم کمار ریڈی کے کشمیر سے کنیا کماری اور گجرات سے آسام تک کے مختلف اخبارات میں صفحہ اول پر ریتو بندھو اسکیم اشتہارات دینے پر چیف منسٹر سے استفسار کیا کہ ان ریاستوں کے عوام سے ریتو بندھو اسکیم کا کیا لینا دینا ہے ۔ صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی نے فی ایکر 4 ہزار روپئے کسانوں کو امداد دینے کا خیرمقدم کیا اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ہر کاشت پر کسانوں کو 25 فیصد زائد اقل ترین قیمت فراہم کریں ۔ انہوں نے حکومت سے وضاحت طلب کی کہ وہ 4 سال تک اس اسکیم سے کسانو ںکو کیوں فائدہ نہیں پہونچایا ۔ ٹی آر ایس نے یکمشت میں کسانوں کے قرض معاف کرنے کا وعدہ کرتے ہوئے اس کو 4 قسطوں میں معاف کیا جس سے کسانوں کے قرض مکمل معاف نہیں ہوئے ۔ ابھی تک بھی سود کی رقم ادا نہیں کی گئی ۔ جس سے کسان پریشان ہیں اور خودکشی کرنے پر مجبور ہو رہے ہیں ۔ حکومت نے خودکشی کرنے والے کسانوں کے ارکان خاندان میں فی کس 6 لاکھ روپئے ایکس گریشیا فراہم کے ساتھ کہنا پڑھتا کہ متاثرہ کسانوں کے خاندانوں میں ایکس گریشیا کی رقم تقسیم نہیں کی گئی ۔ اُتم کمار ریڈی نے کہا کہ آئندہ انتخابات میں کانگریس کو اقتدار حاصل ہوتے ہی کسانوں کے 2 لاکھ روپئے تک قرض معاف کئے جائیں گے ۔ فی الحال کاشت پر جو اقل ترین قیمت ادا کی جارہی ہے ۔ اس میں 25 فیصد تک اضافہ کیا جائے گا ۔ ریاستی حکومت اپنی طرف سے ادا کرے گی ۔ انہوں نے کانگریس کے تمام قائدین اور کارکنوں کو چیتنیہ بس یاترا کو کامیاب بنانے کی اپیل کی ۔

 

ٹی آر ایس حکومت کو بیدخل کرنے کا عمل شروع
محبوب نگر کے تلگودیشم قائدین کی کانگریس میں شمولیت ، اتم کمار ریڈی کا بیان
حیدرآباد /11 مئی ( سیاست نیوز ) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اُتم کمار ریڈی نے آج محبوب نگر کی نمائندگی کرنے والے تلگودیشم کے قائد این پی وینکٹیش اور ان کے حامیوں کو کانگریس میں شامل کرتے ہوئے کہا کہ ٹی آر ایس کو اقتدار سے بے دخل کرنے کیلئے سماج کے تمام طبقات اور مختلف جماعتوں کے قائدین کانگریس کے پلیٹ فارم پر جمع ہورہے ہیں ۔ آج شام گاندھی بھون میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات بتائی ۔ اس موقع پر سابق مرکزی وزیر اے جئے پال ریڈی ارکان اسمبلی ڈی کے ارونا ، سمپت کمار سابق رکن پارلیمنٹ ملو روی کے علاوہ دوسرے قائدین موجود تھے ۔ اُتم کمار ریڈی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ 2019 کے عام انتخابات میں کانگریس پارٹی بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کرے گی اور ضلع محبوب نگر کے تمام 14 اسمبلی حلقوں پر کانگریس کا قبضہ ہوجائے گا ۔ کوئی بھی طاقت کانگریس کو اقتدار کے زینے ۔تک پہونچنے سے روک نہیں سکتی ۔ کے سی آر کے جھوٹ کا گھڑا بھر چکا ہے۔ انتخابی وعدوں کو پورا کرنے میں ٹی آر ایس حکومت ناکام ہوچکی ہے ۔ سماج کا کوئی بھی طبقہ حکومت کی کارکردگی سے مطمین نہیں ہے ۔ کانگریس کو اقتدار حاصل ہوتے ہی 2 لاکھ روپئے تک کسانوں کے قرضے معاف کردئے جائیں گے ۔ تلگودیشم سے مستعفی ہوکر کانگریس میں شامل ہونے والے این پی وینکٹیش نے کہا کہ کانگریس پارٹی تلنگانہ میں ٹی آر ایس کی متبادل بن کر ابھر رہی ہے ۔ اُتم کمار ریڈی کی قیادت میں کانگریس پارٹی نے عوامی اعتماد حاصل کرلیا ہے ۔ ان کی قیادت کو مستحکم کرنے اور ڈی کے ارونا کے ساتھ تعاون کرنے کیلئے وہ کانگریس میں شامل ہو رہے ہیں ۔ 2019 میں کانگریس کو اقتدار لانے کا نشانہ مختص کرتے ہوئے کام کیا جائے گا ۔ ٹی آر ایس کے عوام دشمن پالیسیوں کو عوام تک لے جایا جائے گا ۔ سابق مرکزی وزیر ایس جئے پارل ریڈی نے وینکٹیش کا کانگریس میں خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ چار سال تک کنبا کرن کی نیند سونے والے کے سی آر پر الیکشن سے عین قبل ریتو بندھو اسکیم متعارف کراتے ہوئے عوام اور کسانوں کو دھوکہ دینے کا الزام عائد کیا اور کہا کہ زرعی شعبہ سے 4 سال تک جو ناانصافی ہوئی ہے ۔ اس کو کسان ہرگز معاف نہیں کریں گے ۔ سابق وزیر ڈی کے ارونا نے کہا کہ ٹی آر ایس کا زوال شروع ہوچکا ہے ۔ کانگریس کا ٹارگیٹ 2019 کا انتخابات ہے ۔ وینکٹیش کی کانگریس میں شمولیت سے ٹی آر ایس کی شکست یقینی ہوگئی ہے ۔ کانگریس پارٹی کی کامیابی کیلئے سب متحدہ طور پر کام کریں گے ۔ کانگریس کے رکن اسمبلی سمپت کمار نے کہا کہ ایسامحسوس ہو رہا ہے کہ سارا محبوب نگر کانگریس میں شامل ہو رہا ہے ۔

 

TOPPOPULARRECENT