Friday , November 24 2017
Home / سیاسیات / کانگریس لیڈر کی شمولیت پر گوا بی جے پی میں تنازعہ

کانگریس لیڈر کی شمولیت پر گوا بی جے پی میں تنازعہ

مرکزی وزراء کے درمیان اختلافات منظر عام پر
پناجی ۔ 26 ۔ ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) گوا بی جے پی میں سابق کانگریس رکن اسمبلی پانڈو رنگ مڈکیکر کے داخلہ سے دو مرکزی وزراء منوہر پاریکر اور سریپد نائک کے درمیان لفظی جنگ چھڑ گئی ہے جبکہ موخز الذکر نے یہ دعویٰ کیا کہ پارٹی میں کانگریس لیڈر کی شمولیت کے بارے میں ان سے مشاورت نہیں کی گئی ہے۔ سریپد نائک نے بتایا کہ پارٹی میں میڈکیکر کی شمولیت کے فیصلے سے قبل ان سے کوئی مشاورت نہیں کی گئی۔ لمحہ آخر میں مجھے صرف اطلاع دی گئی ہے جبکہ میں اس فیصلہ کے حق میں نہیں تھا ۔ نائک بظاہر مایوس ہوگئے ہیں کیونکہ حلقہ ا سمبلی کمبھر جوا سے اپنے فرزند کیلئے ٹکٹ کی آس میں ہیں، اسی حلقہ سے میڈکیکر بی جے پی میں شمولیت سے قبل نمائندگی کرتے تھے ۔ سابق رکن اسمبلی نے گزشتہ ہفتہ بی جے پی میں شمولیت اختیار کی تھی جبکہ مرکزی وزیر دفاع منوہر پاریکر نے حلقہ کمبھر جا میں وجئے سنکلپ ہال سے مخاطب کیا تھا ۔ توقع ہے کہ اس حلقہ سے 3 مرتبہ منتخب میڈکیکر اس بار بی جے پی کے ٹکٹ پر مقابلہ کریں گے ۔ اگرچیکہ پاریکر نے کل میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے یہ ادعا کیا تھا کہ پارٹی میں کانگریس لیڈر کی شمولیت سے قبل سریپد نائک کو اعتماد میں لیا گیا ہے لیکن مرکزی وزیر ایوش نائک نے یہ دعویٰ کیا کہ اس مسئلہ پر ان سے رسمی گفتگو کی گئی ہے اور فیصلے کے بعد محض اطلاع دی گئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کی شمولیت پارٹی اصولوں کے خلاف ہے اور وہ یہ مسئلہ پارٹی ہائی کمان سے رجوع کریں گے ۔ میڈکیکر جوکہ سابق بی جے پی وزیر بھی ہیں، پارٹی چھوڑکر کانگریس میں داخل ہوگئے تھے اور گزشتہ ہفتہ کانگریس سے نکل گئے ہیں اور یہ دعویٰ کیا کہ گوا میں پارٹی کا کوئی مستقبل نہیں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT