Wednesday , September 26 2018
Home / شہر کی خبریں / کانگریس مسلمانوں اور آندھرائی عوام میں پارٹی اعتماد بحال کرنے کوشاں

کانگریس مسلمانوں اور آندھرائی عوام میں پارٹی اعتماد بحال کرنے کوشاں

مجلس سے آر پار کی لڑائی کا اعلان ، ہنمنت راؤ اور رینوکا چودھری کا گاندھی بھون میں خطاب

مجلس سے آر پار کی لڑائی کا اعلان ، ہنمنت راؤ اور رینوکا چودھری کا گاندھی بھون میں خطاب
حیدرآباد ۔ 15 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی نے گریٹر حیدرآباد کے حدود میں کانگریس پارٹی کو مستحکم کرنے کے لیے مسلمانوں اور ( سٹیلرس ) آندھرا والوں میں پارٹی کا اعتماد بحال کرنے اور مجلس سے آر پار کی لڑائی لڑنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ حکمران ٹی آر ایس اور مجلس کی ایک دوسرے سے بڑھتی قربت کا جائزہ لینے کے بعد کانگریس پارٹی نے مجوزہ گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے انتخابات میں تنہا مقابلہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ 21 تا 29 جون تک تمام بلدی وارڈس میں مقامی کانگریس قائدین اور ورکرس کا اجلاس طلب کرتے ہوئے مقامی مسائل سے واقفیت حاصل کرنے اور اس کی یکسوئی کے لیے ارباب مجاز سے رجوع ہونے کا بھی فیصلہ کیا گیا ۔ کل گاندھی بھون میں منعقدہ اجلاس میں سکریٹری اے آئی سی سی و رکن راجیہ سبھا مسٹر وی ہنمنت راؤ نے کانگریس کو نقصان پہونچانے اور ٹی آر ایس سے دوستی بڑھانے کے باوجود مجلس سے نرمی کی وجہ طلب کی ۔ پرانے شہر میں کانگریس کو مستحکم کرنے کے لیے پارٹی کے مقامی قائدین کو اہمیت دینے اور مسلمانوں کو اعتماد میں لینے کا مشورہ دیا ۔ کانگریس کی رکن راجیہ سبھا مسز رینوکاچودھری نے کہا کہ پرانے شہر میں ترقیاتی کاموں کیلئے کانگریس کے ارکان راجیہ سبھا اپنے ایم پی فنڈز سے فنڈز جاری کریں ۔ صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کیپٹن اتم کمار ریڈی نے مجلس کو مفاد پرست جماعت قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ اقتدار کی لالچی ہے جب تک اقتدار کانگریس کے پاس تھا مجلس کانگریس کے ساتھ تھی ۔ اب اقتدار پر ٹی آر ایس ہے ۔ لہذا مجلس ٹی آر ایس کی گود میں بیٹھ گئی ہے ۔ تاہم اس سے کانگریس کو کچھ فرق پڑنے والا نہیں ہے ۔ کانگریس جی ایچ ایم سی کا تنہا مقابلہ کرے گی ۔ پرانے شہر کے بشمول تمام بلدی ڈیویژنس پر اپنے طاقتور امیدوار کو کھڑا کرے گی ۔ کانگریس کے 10 سالہ دور حکومت کے دوران حیدرآباد کی ترقی کیلئے کئے گئے اقدامات سے واقف کرائے گی ۔ ٹی آر ایس نے مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا ۔ اس کو ابھی تک پورا نہیں کیا ۔ مسلم تحفظات کو کانگریس پارٹی موضوع بحث بنائے گی ۔

TOPPOPULARRECENT