Monday , June 18 2018
Home / شہر کی خبریں / کانگریس مسلمانوں کی ترقی اور بہبود کے معاملے میں عہد کی پابند

کانگریس مسلمانوں کی ترقی اور بہبود کے معاملے میں عہد کی پابند

مسلم تحفظات کی سرپنچس تا ضلعی صدور تک کامیابی پر کتابچہ کا رسم اجراء ، کے جانا ریڈی

مسلم تحفظات کی سرپنچس تا ضلعی صدور تک کامیابی پر کتابچہ کا رسم اجراء ، کے جانا ریڈی
حیدرآباد ۔ 14 ۔ جولائی : ( سیاست نیوز ) : کانگریس کے قائد مقننہ مسٹر کے جانا ریڈی نے مسلم تحفظات کی سیاسی میدان میں سرپنچس سے ضلع پریشد صدر نشین کے عہدوں تک کامیابی پر تیار کردہ کتابچہ کی رسم اجراء کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس مسلمانوں کی ترقی اور بہبود کے معاملے میں عہد کی پابند ہے ۔ مسٹر محمد علی شبیر نے مسلم تحفظات کی مخالفت کرنے والی مرکزی وزیر اقلیتی امور مسز نجمہ ہبت اللہ کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے حیدرآباد کا دورہ کرنے اور مسلم تحفظات کے ثمرات کا جائزہ لینے کا مشورہ دیا ۔ آج سی ایل پی آفس اسمبلی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مسٹر کے جانا ریڈی نے کہا کہ 2004 میں کانگریس نے مسلمانوں کو تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا اور کئی قانونی رکاوٹوں کے باوجود اس پر مکمل عمل آوری کررہی ہے ۔ مسلم تحفظات میں مسٹر محمد علی شبیر کی مساعی ناقابل فراموش ہے ۔ تعلیمی میدان میں 70 فیصد مسلم طلبہ پروفیشنل کورس کی مفت تعلیم اسکیم اور اسکالر شپس کی سہولتوں سے فائدہ اٹھا رہے ہیں ۔ اس کے علاوہ سرکاری ملازمتوں میں بھی مسلم تحفظات پر عمل کیا گیا ہے ۔ سیاسی میدان میں بھی مسلم تحفظات کی بدولت مقامی اداروں میں مسلمانوں کی نمائندگی میں زبردست اضافہ ہوا ہے ۔ کانگریس کے ڈپٹی فلور لیڈر کونسل مسٹر محمد علی شبیر نے کہا کہ مسلم تحفظات سے مسلمانوں کی تعلیمی میدان اور سرکاری سطح کے علاوہ سیاسی میدان میں انقلابی ترقی ہورہی ہے ۔ ہندوتوا طاقتوں کو خوش کرنے کے لیے مرکزی وزیر اقلیتی امور مسز نجمہ ہبت اللہ نے مسلم تحفظات کی مخالفت کرتے ہوئے مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہونچایا ہے ۔ مسٹر محمد علی شبیر نے مسز نجمہ ہبت اللہ کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے حیدرآباد کے علاوہ تلنگانہ یا آندھرا پردیش کے کسی بھی علاقے کا دورہ کرتے ہوئے مسلم تحفظات سے مسلمانوں کی جو ترقی ہورہی ہے اس کا جائزہ لینے کا مشورہ دیا ۔ اور بتایا کہ مسلم ریزرویشن سے تلنگانہ میں ایک مسلم قائد جہاں مئیر منتخب ہوا ہے وہیں آندھرا پردیش میں 2 مسلم قائدین مئیرس منتخب ہوئے ہیں ۔ تلنگانہ میں ایک اور آندھرا پردیش میں 4 صدر نشین منتخب ہوئے تلنگانہ میں 7 اور آندھرا میں 11 نائب صدر نشین ، تلنگانہ میں 13 اور آندھرا میں 22 کارپوریٹرس تلنگانہ میں 114 اور آندھرا میں 213 کونسلرس تلنگانہ میں 4 اور آندھرا میں 11 زیڈ پی ٹی سی امیدوار منتخب ہوئے ۔ تلنگانہ میں 73 اور آندھرا میں 163 ایم پی ٹی سی منتخب ہوئے ۔ آندھرا پردیش میں 2 ضلع پریشد صدر نشین منتخب ہوئے تلنگانہ میں 2 منڈل پریشد صدر منتخب ہوئے تلنگانہ میں 89 اور آندھرا پردیش میں 177 سرپنچس منتخب ہوئے ۔ مسلم تحفظات سے تلنگانہ میں جملہ 306 اور آندھرا پردیش میں 604 جملہ 910 مسلمان گرام پنچایت سے مئیر کے عہدے تک منتخب ہوئے ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT