Saturday , December 16 2017
Home / شہر کی خبریں / کانگریس پارٹی کے قائدین بدعنوانیوں میں ملوث ، ٹی آر ایس پر الزامات مسترد

کانگریس پارٹی کے قائدین بدعنوانیوں میں ملوث ، ٹی آر ایس پر الزامات مسترد

ومشی چندر ریڈی کی جوپلی کرشنا راؤ پر تنقیدیں غیر ضروری ، ٹی آر ایس ایم ایل سی نارائن ریڈی کا بیان
حیدرآباد ۔ 15 ۔  فروری (سیاست نیوز) تلنگانہ راشٹرا سمیتی نے وزیر پنچایت راج جوپلی کرشنا راؤ پر اپوزیشن کے الزامات کو مسترد کردیا اور کہا کہ کانگریس پارٹی کے قائدین جو خود بدعنوانیوں میں ملوث ہیں ، وہ ٹی آر ایس حکومت کے وزراء کو نشانہ بنارہے ہیں۔ ٹی آر ایس کے رکن قانون ساز کونسل کے نارائن ریڈی نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کانگریس کے رکن اسمبلی ومشی چندر ریڈی کی جانب سے جے کرشنا راؤ پر کی گئی تنقیدوں کو  غیر ضروری اور بے بنیاد قرار دیا ۔ انہوں نے کہا کہ ومشی چندر ریڈی کے الزامات دراصل کرشنا راؤ کی مقبولیت سے بوکھلاہٹ کا نتیجہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ وزیر پنچایت راج کی حیثیت سے کرشنا راؤ نے ضلع محبوب نگر کی ترقی کیلئے کئی اقدامات کئے ۔ انہوں نے کہا کہ ومشی چندرا ریڈی کے علاقہ میں بھی کئی اسکیمات کا آغاز کیا گیا ہے ۔ اسکیمات میں بے قاعدگیوں کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے نارائن ریڈی نے کہا کہ کرشنا راؤ نے اپنی نجی زندگی میں بھی کوئی اسکام نہیں کیا ہے ۔ بینکوں سے جو قرض حاصل کئے گئے تھے ، انہیں سود کے ساتھ ادا کیا گیا اور وہ کسی بھی بینک کو قرض باقی نہیں ہے ۔ سیاسی زندگی میں ایک معمولی کارکن کی حیثیت سے اپنا کیریئر شروع کرنے والے کرشنا راؤ پر بے قاعدگیوں اور بدعنوانیوں کے الزامات افسوسناک ہے۔ انہوں نے کہا کہ ومشی چندرا ریڈی کو چاہئے کہ وہ جوپلی کرشنا راؤ سے معذرت خواہی کریں ۔ بصورت دیگر ٹی آر ایس کے کارکن انہیں کلواکرتی اسمبلی حلقہ میں داخل ہونے نہیں دیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کے رکن اسمبلی اپنے مقام سے ہٹ کر نچلی سطح کے الزامات عائد کر رہے ہیں جو کسی رکن اسمبلی کو ہرگز زیب نہیں دیتا۔ محبوب نگر  ضلع کی ترقی کیلئے کرشنا راؤ نے جو مساعی کی اس سے عوام اچھی طرح واقف ہیں اور ان کی زندگی بدعنوانیوں سے پاک ہے۔ انہوں نے ومشی چندرا ریڈی کو چیلنج کیا کہ وہ محبوب نگر کی ترقی کے مسئلہ پر کھلے مباحث کیلئے تیار ہوں ۔

TOPPOPULARRECENT