Wednesday , December 19 2018

کانگریس کا ہنگامہ ، ہیڈفون سے سوامی گوڑ کی آنکھ زخمی

سروجنی دیوی ہاسپٹل میں شریک، گورنر کے خطبے کے دوران ایوان میں کشیدگی

حیدرآباد۔ 12مارچ (سیاست نیوز) اپوزیشن کانگریس کے احتجاج اور ہنگامہ آرائی کے دوران تلنگانہ اسمبلی اور کونسل کے بجٹ سیشن کا آغاز ہوا۔ گورنر ای ایس ایل نرسمہن کے خطبے کے دوران احتجاج میں اس وقت صورتحال کشیدہ ہوگئی جب کانگریس کے رکن کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی کی جانب سے پھینکا گیا ہیڈفون کونسل صدرنشین سوامی گوڑ کی آنکھ کو لگا جس سے وہ معمولی زخمی ہوگئے۔ انہوں نے گورنر کی تقریر تک ضبط کیا تاہم گورنر کی واپسی کے بعد انہیں سروجنی دیوی آئی ہاسپٹل منتقل کیا گیا جہاں ڈاکٹروں نے شریک کرکے 24 گھنٹے نگرانی میں رکھا ہے۔ گورنر نے کانگریس کے احتجاج، نعرے بازی اور مارشلوں سے مڈ بھیڑ کے دوران اپنا خطبہ تیزی سے مکمل کرلیا۔ گورنر نرسمہن 5 منٹ تاخیر سے ایوان میں داخل ہوئے۔ انکے ہمراہ چیف منسٹر چندر شیکھر رائو، اسمبلی اسپیکر مدھو سودھن چاری اور کونسل صدرنشین سوامی گوڑ موجود تھے۔ گورنر کی ایوان میں آمد کے ساتھ ہی کانگریس ارکان نے احتجاج کا آغاز کردیا۔ کانگریس رکن جیون ریڈی نے گورنر کی تاخیر سے آمد پر اعتراض کرتے ہوئے نوڈسپلین کا نعرہ لگایا۔ نرسمہن کے خطبہ کے آغاز کے 5 منٹ میں کانگریس ارکان اپنی نشستوں سے اٹھ کر احتجاج کرنے لگے۔ کانگریسی ارکان جب پی سی سی صدر اتم کمار ریڈی کی قیادت میں ایوان کے وسط میں پہنچنے کی کوشش کررہے تھے مارشلوں نے آگے بڑھنے سے روک دیا۔ کانگریسی ارکان اور مارشلوں کے درمیان بحث تکرار اور دھکم پیل دیکھی گئی۔ ایوان کے درمیانی حصہ کو عملاً مارشلوں سے بھردیا گیا تھا اور ایوان کا اندرون حصہ پولیس چھائونی میں تبدیل ہوچکا تھا۔ کانگریسی ارکان نے خطبے میں کسانوں کے مسائل، مسلم تحفظات، ایس ٹی تحفظات اور دیگر مسائل کو نظرانداز کرنے پر بطور احتجاج خطبے کی کاپیاں چاک کرکے پوڈیم کی طرف پھینکی ۔ اسی دوران کانگریس کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی نے ہیڈفون کو پوڈیم کی طرف پھینک دیا۔ جو پوڈیم سے ٹکراکر صدرنشین کونسل سوامی گوڑ کی آنکھ کو لگا۔ بی جے پی نے خطبے کا بائیکاٹ کرتے ہوئے واک آئوٹ کردیا۔ خطبے کے بعد جیسے ہی سوامی گوڑ کو ہاسپٹل سے رجوع کرنے کی اطلاع عام ہوئی کئی وزراء اور ارکان مقننہ نے ہاسپٹل پہنچ کر عیادت کی۔ بتایا جاتا ہے کہ ڈاکٹرس نے معائنے کے بعد دوائیں تجویز کیں۔ 24 گھنٹے ابزرویشن کے بعد مزید علاج کا آغاز کیا جائے گا۔ ڈپٹی چیف منسٹرس کڈیم سری ہری اور محمود علی، ریاستی وزراء این نرسمہا ریڈی، پدما رائو، سرینواس یادو، پوچارم سرینواس ریڈی، ڈپٹی اسپیکر پدمادیویندر ریڈی اور کئی ارکان مقننہ نے عیادت کی ۔ کانگریس کی جانب سے امکانی احتجاج کی اطلاعات پر سخت سکیوریٹی انتظامات کیے گئے تھے۔

TOPPOPULARRECENT