Monday , October 15 2018
Home / شہر کی خبریں / کانگریس کو دفن کرنے کے ٹی آر کا منصوبہ ’ دن کا خواب ‘

کانگریس کو دفن کرنے کے ٹی آر کا منصوبہ ’ دن کا خواب ‘

ریاستی وزیر آئی ٹی ’’ چوں چوں کا مربہ ‘‘ ۔ قائد اپوزیشن قانون ساز کونسل محمد علی شبیر کا رد عمل
حیدرآباد ۔ 20 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل محمد علی شبیر نے ریاستی وزیر کے ٹی آر کو ’ چوں چوں کا مربہ ‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اقتدار کے نشے میں ذہنی توازن کھو چکے ہیں ۔ راہول گاندھی کی صدارت کے لیے ماحول تیار ہوجانے کا خیر مقدم کیا ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات بتائی ۔ اس موقع پر کانگریس کے رکن قانون ساز کونسل پی سدھاکر ریڈی بھی موجود تھے ۔ محمد علی شبیر نے کہا کہ کانگریس کو دفن کرنا کسی سیاسی طاقت کے بس کی بات نہیں ہے ۔ کے ٹی آر دن میں خواب دیکھ رہے ہیں اور اقتدار کے نشے میں گھمنڈ و تکبر کا شکار ہوگئے ہیں ۔ ٹی آر ایس کو اقتدار کانگریس کی مرہون منت کانتیجہ ہے ۔ صدر کانگریس مسز سونیا گاندھی علحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل نہیں دیتی تو کے سی آر چیف منسٹر اور کے ٹی آر ریاستی وزیر نہیں بنتے ۔ انگریزوں کے خلاف مقابلہ کرنے اور ملک کو آزادی دلانے والی کانگریس چٹان ہے ۔ اس کو دفن کرنا کے ٹی آر اور ٹی آر ایس کے بس کی بات نہیں ہے ۔ کانگریس نے جو قربانیاں دی ہیں ٹی آر ایس اس کی دھول بھی نہیں ہے ۔ محمد علی شبیر نے کہا کہ اسمبلی اور کونسل کا اجلاس 50 دن تک منعقد کرنے کا اعلان کرنے والے چیف منسٹر کے سی آر نے 16 دن میں اسمبلی سے راہ فرار اختیار کی ہے ۔ ملک اور تلنگانہ میں بی جے پی اور ٹی آر ایس کا گراف تیزی سے گھٹنے کا دعوی کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ سال جنوری سے بی جے پی اور ٹی آر ایس کی الٹی گنتی شروع ہوجائے گی ۔ کشمیر سے کنیا کماری تک پھیلی ہوئی کانگریس پارٹی کو دفن کرنا کے ٹی آر کے بس کی بات نہیں ہے ۔ ٹی آر ایس پارٹی نے انتخابی منشور میں جو بھی وعدے کئے ہیں انہیں پورا کرنے میں ناکام ہوگئی ہے ۔ اندرا گاندھی کی صد سالہ یوم پیدائش تقاریب کے دوران پارٹی کارکنوں میں کافی جوش و خروش دیکھا گیا ہے ۔ آج دہلی میں سونیا گاندھی کی صدارت میں سی ڈبلیو سی اجلاس منعقد ہوا ہے ۔ جس میں راہول گاندھی کے صدر بننے کے امکانات روشن ہوئے ۔ ملک کے عوام راہول گاندھی کو وزیراعظم دیکھنے کی خواہش مند ہیں وزیر اعظم نریندر مودی نے نوٹ بندی اور جی ایس ٹی پر عمل آوری کا فیصلہ کرکے ملک کی معیشت کو تباہ و برباد کردیا ہے ۔ وزیراعظم کالا دھن واپس لانے میں اور ہر سال 2 کروڑ نوجوانوں کو روزگار دینے میں ناکام ہوگئے ۔

TOPPOPULARRECENT