Thursday , September 20 2018
Home / Top Stories / کانگریس کی غلط پالیسیوں سے ملک کو نقصان، ترقی نظرانداز

کانگریس کی غلط پالیسیوں سے ملک کو نقصان، ترقی نظرانداز

سیاسی مفاد کیلئے آندھراپردیش کی تقسیم، تحریک تشکر پر وزیراعظم مودی کا لوک سبھا میں جواب
نئی دہلی ۔ 7 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی نے آج کانگریس پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ آزادی کے بعد سے اختیار کی جانے والی اس کی غلط پالیسیوں کے سبب ملک متاثر ہوا ہے اور اس پارٹی نے عوام کی فلاح و بہبود پر توجہ دینے کے بجائے ایک خاندان کی مدح سرائی پر اپنا وقت صرف کردیا۔ صدارتی خطبہ پر تحریک تشکر کے ضمن میں وزیراعظم نے لوک سبھا میں جواب دیتے ہوئے اس اپوزیشن پارٹی (کانگریس) کو آندھراپردیش کی تقسیم کیلئے بھی سخت مذمت کا نشانہ بنایا اور الزام عائد کیا کہ اس نے کسی مناسب تیاری کے بغیر محض سیاسی فائدہ کیلئے ریاست کو تقسیم کردیا، جس سے عوام کو دشواریوں کا سامنا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ ’’ہم جب نئی ریاستوں کے قیام کی بات کرتے ہیں تو اس انداز کو یاد رکھتے ہیں جس طرح اٹل بہاری واجپائی نے اتراکھنڈ اور چھتیس گڑھ کا قیام عمل میں لایا تھا۔ انہوں نے دکھا دیا کہ دوراندیش فیصلہ سازی کیلئے کی جاتی ہے‘‘۔ وزیراعظم کے خطاب کے دوران کانگریس کے ارکان نعرہ لگاتے ہوئے آندھراپردیش کے ساتھ انصاف کا مطالبہ کررہے تھے۔ مودی نے کہا کہ جب کبھی منتخب اپوزیشن جماعتوں نے ان کی حکومت کی مذمت کی ان کی بحث میں ٹھوس مواد کا فقدان رہتا ہے کیونکہ وہ صرف یہی کہتی ہیں کہ ’’جب ہم اقتدار میں تھے‘‘۔ مودی نے تلخ و تنقد الفاظ پر مبنی اپنے خطاب میں کہا کہ ’’یہ وہی پارٹی ہے جس نے ہندوستان کو تقسیم کیا تھا۔ کئی دہائیوں تک ایک پارٹی نے صرف ایک خاندان کی مدح سرائی پر اپنی تمام تر توانائیوں کو جھونک دیا۔ محض ایک خاندان کے مفادات کی خاطر ملک و قوم کے مفادات کو نظرانداز کردیا گیا‘‘۔ مودی نے کہاکہ یہ تقسیم بھی کانگریس کی غلط پالیسیوںکا نتیجہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’’ایک بھی دن ایسا نہیں گزرتا جب ملک آپ کی طرف سے پھیلائے گئے زہر سے متاثر نہیں ہوتا‘‘۔ مودی نے کہا کہ ’’سردار ولبھ بھائی پٹیل اگر پہلے وزیراعظم ہوتے تو کشمیر کا ایک حصہ آج پاکستان کے کنٹرول میں نہ ہوتا۔ وزیراعظم نے کہا کہ اپوزیشن کو احتجاج کا حق تو حاصل ہے لیکن گڑبڑ اور رخنہ اندازی کا حق نہیں ہے۔

TOPPOPULARRECENT