Saturday , May 26 2018
Home / شہر کی خبریں / کانگریس کے بغیر تیسرا محاذ ’متوفی نومولود‘کے مترادف

کانگریس کے بغیر تیسرا محاذ ’متوفی نومولود‘کے مترادف

فرقہ پرست بی جے پی سے مقابلے کیلئے تمام سیکولر جماعتوں میں اتحاد ضروری : موئیلی

حیدرآباد۔ 11 مارچ (پی ٹی آئی) کانگریس کے سینئر لیڈر ایم ویرپا موبائیلی نے کہا کہ بعض علاقائی جماعتوں کا مجوزہ تیسرا محاذ (تھرڈ فرنٹ) ’مردہ حالت میں پیدا شدہ بچہ‘ (متوفی نومولود) کے مترادف ہوگا اور دعویٰ کیا کہ صرف ان کی پارٹی (کانگریس) کے زیرقیادت مختلف جماعتوں کا قومی وفاق (اتحاد) ہی بی جے پی زیرقیادت این ڈی اے کے خلاف موثر مقابلہ کرسکتا ہے۔ مغربی بنگال کی چیف منسٹر ممتا بنرجی اور تلنگانہ میں ان کے ہم منصب کے چندر شیکھر راؤ کی جانب سے ایک غیرقانونی اور غیرکانگریس ی محاذ تشکیل دینے کی کوششوں کے درمیان موئیلی نے کہا کہ کانگریس کے بغیر کوئی بی جے پی کے متبادل کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔ سابق مرکزی وزیر موئیلی نے کہا کہ ’’کانگریس ہمارے ملک میں پھیلیل ہوئی ہے، اس کے بغیر آپ کسی متبادل کا تصور بھی نہیں کرسکتے۔ یہ (تیسرا محاذ) ’ایک متوفی نومولود‘ ثابت ہوگا۔ کانگریس کو ہی (ایک وسیع مخالف بی جے پی اتحاد کی قیادت) کرنا ہوگا۔ موئیلی نے جو کرناٹک کے سابق چیف منسٹر بھی ہیں، مزید کہا کہ ’’یقینا وہ (جو تیسرا محاذ بنانے کی کوشش کررہے ہیں) کانگریس کے بغیر کچھ نہیں کرسکتے۔ کانگریس کے بغیر وہ کسی مشترکہ قائد کو تلاش کرنے کے بارے میں سوچ بھی نہیں سکتے، کیونکہ وہ تمام علاقائی جماعتیں ہیں اور علاقائی جماعتیں خود کو ایک قومی جماعت (کانگریس) سے مربوط کریں‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں بھی کانگریس کے بغیر کسی محاذ کے تجربے ناکام ثابت ہوچکے ہیں۔ اس طرح کوئی بھی تیسرا محاذ بی جے پی کے دباؤ کے تحت ناکام ہوجائے گا اور اس سے این ڈی اے کی اصل جماعت (بی جے پی) کے مفادات کی تکمیل ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ ’’یہ (مخالف بی جے پی محاذ) قومی جماعت (کانگریس) اور علاقائی جماعتوں کا امتزاج ہونا چاہئے‘‘۔ موئیلی نے مزید کہا کہ ’’فرقہ پرست بی جے پی، اور اس کے حلیفوں کے خلاف تمام سیکولر جماعتوں کو متحدہ طور پر مقابلہ کرنا چاہئے، بصورت دیگر یہ ملک جیسا کہ میرے ایک دوست کہہ رہے تھے کہ (واحد جماعت کی حکمرانی والے کمیونسٹ ملک) چین جیسا ہوجائے گا۔ کانگریس کے لیڈر نے الزام عائد کیا کہ اس ملک پر این ڈی اے حکومت کی نہیں بلکہ بی جے پی اور مافوق دستور اتھاریٹی آر ایس ایس کی حکمرانی ہے۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ مرکزی وزراء کے خانگی سیکریٹریز اور اسٹاف کی آر ایس ایس سے بھرتیاں کی جارہی ہیں۔ جمہوریت کے لئے یہ انتہائی خطرناک رجحان ہے۔

TOPPOPULARRECENT