Wednesday , January 24 2018
Home / اضلاع کی خبریں / کرناٹک اردو اکیڈیمی کی طرف سے 21 کتابوں کیلئے انعامات

کرناٹک اردو اکیڈیمی کی طرف سے 21 کتابوں کیلئے انعامات

بنگلورو02؍ مارچ : کرناٹک اردو اکیڈیمی نے 2010 تا 2013 تک کیلئے منتخب کتابوں پر انعامات کا اعلان کردیا ہے۔ اکاڈمی کی چیر پرسن ڈاکٹر فوزیہ چودھری نے ایک اخباری کانفرنس میں انعامات کیلئے منتخب 21کتابوں کا اعلان کیا۔ منتخب کتابوں میں شاعری، تنقید،ترجمہ، خاکے، بچوں کا ادب، انشائیہ، ناول، تنقیدی مضامین، افسانے، سوانح اور تحقیقی موضوعات پر

بنگلورو02؍ مارچ : کرناٹک اردو اکیڈیمی نے 2010 تا 2013 تک کیلئے منتخب کتابوں پر انعامات کا اعلان کردیا ہے۔ اکاڈمی کی چیر پرسن ڈاکٹر فوزیہ چودھری نے ایک اخباری کانفرنس میں انعامات کیلئے منتخب 21کتابوں کا اعلان کیا۔ منتخب کتابوں میں شاعری، تنقید،ترجمہ، خاکے، بچوں کا ادب، انشائیہ، ناول، تنقیدی مضامین، افسانے، سوانح اور تحقیقی موضوعات پر کتابیں شامل ہیں۔ اکیڈیمی کی ایوارڈ سب کمیٹی نے کافی غور وخوض کے بعد ان کتابوں کا انتخاب کیا۔ جسے اسٹانڈنگ کمیٹی اور جنرل کونسل کی منظوری کے بعد آج اعزازات کی فہرست جاری کی گئی۔ ان کتابوں میں 2010 کیلئے کتاب ’’ثریٰ‘‘ (امیر الدین امیر)،’’ آنسو ں کے جواب میں‘‘ (فدا حسین ضیاء)، ’’ فن کے کچھ تنقیدی زاویے‘‘ (ماجد داغی) ’’سلسبیل‘‘ (مولانا سلمان عابدی) ’’نشاط سخن‘‘( عبدالقادر عارف منڈیا) ۔ 2011 کیلئے ’’فردوس تغزل‘‘ ( ابو البیان حماد) ’’جانے پہچانے‘‘ (ڈاکٹر وحید انجم) ’’گلشنِ ظہیر‘‘( ظہیر رانی بنوری) ’’گلزارکلیم‘‘( نثار احمد کلیم)’’حافظ کرناٹکی حیات وخدمات‘‘( آفاق عالم صدیقی)۔ 2012کیلئے ’’شوخی ٔ تحریر‘‘ (ڈاکٹر فرزانہ فرح)’’سادہ کاغذ سے عکس خواب اترا‘‘ (ڈاکٹر فاطمہ زہرہ)’’سناٹے بول اٹھے‘‘ (ڈاکٹر داؤد محسن) ’’طائر دل(ظہیر بایار) ’’رشتے‘‘(انیل ٹھکر)۔2013کیلئے ۔ ’’مدرکات‘‘(ڈاکٹر راہی فدائی) ’’سکال‘‘ (یوسف رحیم بدری)’’خواتین کی اردو خدمات‘‘ (ڈاکٹر عبدالقادر غیاث الدین فاروقی)’’اپناہی گریباں بھول گئے‘‘(شاہد فریدی) ’’مولانا ابوالبیان حماد عمری شخصیت وادبی کارنامے‘‘ (ڈاکٹر آر محمد عمری) ’’خواجہ بندہ نواز سے منسوب دکنی رسائل‘‘( م ن سعید)۔ اکیڈیمی کی طرف سے کتابوں کو ایوارڈ دینے کی تقریب 7 مارچ کو منعقد کرنے کی تیاریاں کی جارہی ہیں۔ تقریب میں ریاست کے تمام مسلم وزراء ، اراکین اسمبلی ، اراکین کونسل اور مختلف بورڈز اور کارپوریشنوں کے چیرمینوں کو مدعو کیا جائے گا۔ انہوںنے بتایا کہ اکیڈیمی کے بجٹ میں مزید 25لاکھ روپیوں کے اضافہ کی مانگ رکھی گئی ہے۔بہت جلد اکیڈیمی کو یہ رقم ملنے کی توقع ہے۔ شہر بنگلور میں اردو صحافت پر ایک کارگاہ منعقد کرنے کیلئے کرناٹک اردو اکیڈیمی کی طرف سے کرناٹکا اردو رپورٹرس فورم کو مالی تعاون دینے کا فیصلہ کیا گیا۔ ساتھ ہی جنرل کونسل میں یہ بھی طے کیاگیا کہ اسی ماہ یا اگلے ماہ بلگام میں کل ہند سطح کی ایک صحافتی کانفرنس منعقد کی جائے گی۔ 18مارچ کو عالمی یوم خواتین کی مناسبت سے اکیڈیمی کی طرف سے خالص خواتین کا مشاعرہ منعقد کرنے کی تیاری کی جارہی ہے۔ کوشش یہ ہوگی کہ اس مشاعرہ میں بین الاقوامی شاعرات کو بھی شامل کیا جائے۔ ڈاکٹر فوزیہ چودھری نے بتایاکہ اردو اکاڈمی کو ریاستی حکومت کی طرف سے جو بجٹ دیا جارہا ہے ، اس میں کسی طرح کی کٹوتی نہ کرنے کی وزیر اعلیٰ سدرامیا نے یقین دہانی کرائی ہے۔ انہیں توقع ہے کہ 13مارچ کو جو بجٹ پیش ہونے جارہا ہے، اس میں بھی اردو اکاڈمی کو افزود فنڈز مہیا کرائے جائیں گے۔ اس موقع پر اکیڈیمی کے اراکین عزیز اﷲ بیگ اور رضوان اﷲ خان موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT