Thursday , April 26 2018
Home / Top Stories / کرناٹک اسمبلی انتخابات ،کانگریس کیلئے نیک شگون

کرناٹک اسمبلی انتخابات ،کانگریس کیلئے نیک شگون

ریالی کے دوران ہجوم میں سے پھینکا گیا پھول کا ہار راست راہول گاندھی کے گلے میں جاگرا

ٹمکور ۔ 6 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) کرناٹک اسمبلی انتخابات کیلئے مہم چلانے والے کانگریس صدر راہول گاندھی کی ریالی کے دوران آج ہجوم میں سے کسی نے پھول کا ہار پھینکا جو راست طور پر راہول گاندھی کے گلے میں جاگرا۔ اس منظر کو ویڈیو میں قید کرلیا گیا۔ کانگریس کے کئی قائدین نے اس ویڈیو کو فوری طور پر وائرل کردیا۔ مختلف گوشوں سے ستائش کے ساتھ تبصرے کئے گئے۔ بی جے پی نے اس وائرل ویڈیو پر تنقید کی اور کہاکہ کانگریس شعبدہ بازی پر اتر آئی ہے۔ یہ واقعہ گذشتہ روز کرناٹک کے علاقہ ٹمکور میں راہول گاندھی کے روڈ شو کے دوران پیش آیا۔ کانگریس کے ایک حامی نے جو مسلم بتایا جاتا ہے، راہول گاندھی کی ریالی کے دوران جوش و خروش کے ساتھ اپنے ہاتھ میں تھامے موتیوںکے ہار کو راہول گاندھی کی جانب پھینکا جو سیدھے ان کے گلے میں جاگرا۔ اس منظر کو دیکھ کر کانگریس قائدین نے اسے نیک شگون قرار دیا اور کہا کہ کرناٹک کیلئے ایک موزوں لیڈر مل گیا ہے۔ کانگریس کو دوبارہ اقتدار یقینی ہے۔ ویڈیو میں بتایا گیا کہ راہول گاندھی اپنی بس کی چھت پر کھڑے ہوکر ہجوم کا ہاتھ ہلا کر جواب دیتے جارہے تھے کہ اچانک ہجوم میں سے ایک پھول کا ہار ان کے گلے میں آ گرا۔ اس حیرت انگیز لمحہ کے دوران انہوں نے فوری ردعمل ظاہر کیا اور اسے گلے سے نکال کر اپنے حامیوں کی جانب ہاتھ ہلا کر خوشی کا اظہار کیا۔ پولیس اس واقعہ کی تحقیقات کررہی ہے کہ آیا یہ سیکوریٹی شکنی ہے یا نہیں۔ راہول گاندھی لنگایت کے مٹھ کا بھی دورہ کررہے تھے جہاں انہوں نے سوامی شیوکمارا سے آشیرواد لیا اور اس طبقہ سے کانگریس کی وابستگی کا بھی اظہار کیا۔ لنگایت کے مندر کو ان کا یہ دورہ اس پس منظر میں ہوا ہیکہ چیف منسٹر سدارامیا نے لنگایت طبقہ کو مذہبی اقلیتی موقف دینے کیلئے مرکز سے سفارش کی ہے۔ تاہم بی جے پی نے اس سفارش پر غور نہیں کیا ہے۔ بی جے پی کرناٹک میں لنگایت طبقہ کے مضبوط لیڈر بی ایس یدی یورپا کو چیف منسٹر امیدوار کی حیثیت سے پیش کیا ہے۔ راہول گاندھی نے اپنی انتخابی مہم کا دوسرے مرحلہ کا آغاز کرتے ہوئے روڈ شو منعقد کئے ہیں۔

 

بی جے پی، آر ایس ایس پر سماج میں نفرت پھیلانے کا الزام
ملک میں امن و ہم آہنگی کی برقراری کیلئے برت رکھنے راہول گاندھی کا منصوبہ
نئی دہلی ۔ 6 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) پارلیمنٹ میں شوروغل اور تعطل کیلئے وزیراعظم نریندر مودی کی جانب سے اپوزیشن کو موردالزام ٹھہراتے ہوئے ان واقعات کے خلاف بی جے پی ارکان پارلیمنٹ کی طرف سے 12 اپریل کو ایک روزہ برت منانے کے اعلان کے بعد کانگریس نے جوابی وار کرتے ہوئے آج کہا کہ مختلف مسائل پر بی جے پی کی دروغ گوئی کو بے نقاب کرنے کیلئے اس (کانگریس) کے کارکن تمام ریاستوں اور ضلع ہیڈکوارٹرس پر 9 اپریل کو ایک روزہ برت رکھیں گے۔ بی جے پی پر جوابی وار کرتے ہوئے کانگریس نے کہا کہ پارلیمانی کارروائی کو نہ چلنے دینے کیلئے بی جے پی ہی ذمہ دار ہے۔ پارلیمنٹ کی کارروائی نہ چلنے پر 23 دن کی تنخواہ نہ لینے این ڈی اے ارکان پارلیمنٹ کی پیشکش کو شعبدہ بازی اور ڈرامہ قرار دیا۔ لوک سبھا میں کانگریس کے لیڈر ملکارجن کھرگے نے اپنی پارٹی کے سینئر ترجمان آنند شرما کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ان کی پارٹی کے ارکان نے راجیہ سبھا کے صدرنشین سے ملاقات کرتے ہوئے ان سے ایوان کو غیرمعینہ مدت کیلئے ملتوی نہ کرنے کی درخواست کی تھی تاکہ اہم قومی مسائل پر بحث کیلئے دو ہفتے یا اس سے زائد مدت تک اجلاس منعقدکیا جاسکے۔ آنند شرما نے کہا کہ ان کی پارٹی کے صدر راہول گاندھی نے ملک میں امن، ہم آہنگی اور بھائی چارگی کے فروغ میں مدد کیلئے تمام ضلع ہیڈکوارٹرس پر برت رکھنے کا منصوبہ بنایا ہے۔
انہوں نے الزام عائد کیا کہ بی جے پی اور آر ایس ایس اپنے تخریبی ایجنڈہ کے ذریعہ سماج میں نفرت و انتشار پھیلا رہے ہیں۔ کانگریس اس کو بے نقاب کرے گی۔ اس کے سربراہ راہول گاندھی نے عوام سے سماج میں امن، ہم آہنگی اور بھائی چارہ برقرار رکھنے کی اپیل کی۔

TOPPOPULARRECENT