Saturday , November 18 2017
Home / ہندوستان / کرناٹک لوک آیوکت کو ہٹادینے کیلئے کارروائی

کرناٹک لوک آیوکت کو ہٹادینے کیلئے کارروائی

بنگلور۔/17نومبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) متنازعہ کرناٹک لوک آیوکت وانی بھاسکر راؤ کو عہدہ سے ہٹادینے کے مسئلہ پر حکومت کو آزمائش سے دوچار کرتے ہوئے اپوزیشن جماعتوں نے آج ایک عرضی اسپیکر اسمبلی کو پیش کی ہے اور یہ درخواست کی ہے کہ انسداد رشوت ستانی ادارہ کے دفتر سے جبراً رقومات کی وصولی کے ریاکٹ میں ان کے فرزند کے ملوث ہونے پر کارروائی شروع کی جائے۔ بی جے پی کے 46اور جنتا دل سیکولر کے 37 ارکان نے علحدہ علحدہ محضر نامے اسپیکر کاگوڈو تھمپا کو پیش کرتے ہوئے لوک ایوکت کی حیثیت سے بھاسکر راؤ کو ہٹادینے کا مطالبہ کیا۔ جبکہ اسمبلی کا سرمائی اجلاس جاری ہے۔ عرضی قبول کرنے کے بعد اسپیکر نے بتایا کہ ترمیم شدہ ایکٹ کے مطابق کم از کم72ارکان کی دستخط لازمی ہے چونکہ یہ تعداد کافی ہے لہذا بہت جلد کل جماعتی اجلاس طلب کرکے کارروائی کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال کے بعد قطعی فیصلہ کیا جائے گا۔ اسپیکرنے اسے ایک قانونی پیچیدہ معاملہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ میں اس خصوص میں اتفاق رائے چاہتا ہوں۔ مسٹر تھمپا نے بتایاکہ وہ اور صدرنشین قانون ساز کونسل ایک تحقیقاتی کمیٹی کی تشکیل کیلئے چیف جسٹس ہائی کورٹ کو ایک مراسلہ روانہ کریں گے جبکہ 3رکنی کمیٹی کیلئے 2ارکان کا تقرر چیف جسٹس کریں گے اور ایک رکن اسمبلی کا تقرر ہم ( صدرنشین اسمبلی و کونسل ) کریں گے اور کمیٹی کی تحقیقاتی رپورٹ وصول ہونے کے بعد ایوان میں پیش کرتے ہوئے قطعی فیصلہ کیا جائے گا۔ قبل ازیں اپوزیشن نے حکومت کو نشانہ بنایا۔ لوک ایوکت آفس میں کرپشن کے سنگین الزامات پر وہ نرم رویہ اختیار کیا ہے ۔ ریاستی حکومت نے اینٹی کرپشن اومیڈسمنٹ کو ہٹادینے سے متعلق کرناٹک لوک آیوکت ( مرممہ )بل  2015 ایوان میں پیش کرتے ہوئے منظور کروایا تھا۔

TOPPOPULARRECENT