Tuesday , January 16 2018
Home / ہندوستان / کرناٹک میں اسکولس کو اقلیتی موقف

کرناٹک میں اسکولس کو اقلیتی موقف

بنگلور 17 جون (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی نے آج کرناٹک کابینہ کے حق تعلیم قانون پر عمل آوری کے مقصد سے پرائمری اسکولس کو اقلیتی موقف منظور کرنے کیلئے اقلیتی طبقہ کے طلبہ کی تعداد کو 75 فیصد سے کم کرکے 25 فیصد کرنے کے فیصلہ کے خلاف احتجاج کی دھمکی دی ہے۔ اِس فیصلہ کے مطابق اقلیتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے طلبہ کی تعداد کسی ادارہ میں مجموعی تع

بنگلور 17 جون (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی نے آج کرناٹک کابینہ کے حق تعلیم قانون پر عمل آوری کے مقصد سے پرائمری اسکولس کو اقلیتی موقف منظور کرنے کیلئے اقلیتی طبقہ کے طلبہ کی تعداد کو 75 فیصد سے کم کرکے 25 فیصد کرنے کے فیصلہ کے خلاف احتجاج کی دھمکی دی ہے۔ اِس فیصلہ کے مطابق اقلیتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے طلبہ کی تعداد کسی ادارہ میں مجموعی تعداد کا 25 فیصد یا اُس سے زائد ہو تو اُس ادارہ کو اقلیتی ادارہ تصور کیا جائے گا۔ اِس فیصلہ سے ریاست بھر میں کئی اسکولس کو اقلیتی موقف حاصل ہونے کا امکان ہے۔ ریاستی بی جے پی لیڈر سریش کمار نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ خانگی اسکولس میں کمزور اور مراعات حاصل کرنے والے طبقات سے تعلق رکھنے والے طلبہ کی نشستیں کم ہوجائیں گی کیونکہ اقلیتی اسکولس کو کوٹہ کے تحت داخلے سے استثنیٰ حاصل ہوگا۔ اُنھوں نے کہاکہ کئی اسکولس اقلیتی موقف کے لئے درخواست دیں گے اور ایک نئی مسابقت پیدا ہوجائے گی۔

ترون تیج پال کی درخواست پر 27 جون کو سماعت
نئی دہلی 17 جون (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ تہلکہ کے بانی ایڈیٹر ترون تیج پال کی درخواست ضمانت پر 27 جون کو سماعت کرے گی۔ اُن پر اپنی ساتھی صحافی کے ساتھ جنسی زیادتی کا مقدمہ دائر کیا گیا ہے اور 27 جون کو ان کی عبوری ضمانت کی میعاد اختتام پذیر ہورہی ہے۔ جسٹس وکرم جیت سین اور ایس کے سنگھ پر مشتمل ایک بنچ نے مقدمہ کی سماعت کیلئے 27 جون کی تاریخ مقرر کی ہے کیونکہ قبل ازیں تیج پال کے وکیل سلمان خورشید نے عدالت سے درخواست کی تھی کہ اس معاملہ کی عاجلانہ سماعت کی جائے۔

TOPPOPULARRECENT