Tuesday , August 14 2018
Home / Top Stories / کرناٹک میں معلق اسمبلی، بی جے پی، کانگریس اکثریت سے محروم

کرناٹک میں معلق اسمبلی، بی جے پی، کانگریس اکثریت سے محروم

جے ڈی (ایس ) ۔ کانگریس اتحاد ، تشکیل حکومت کیلئے کمارا سوامی اور یدی یورپا کے دعوے، گورنر کو مکتوب

بنگلورو ۔ /15 مئی (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی آج واحد سب سے بڑی پارٹی (104 نشستیں )بن کر ابھری لیکن 222 کی عددی طاقت میں اکثریت کیلئے اسے مزید 8 نشستوں کی ضرورت ہے ۔ جے ڈی ایس (37)کے ساتھ کانگریس (78)نے اتحادکرلیا ۔اس طرح اسے درکار اکثریت حاصل ہوگئی ۔ چنانچہ بی جے پی اور کانگریس دونوں نے گورنر سے ملاقات کرکے تشکیل حکومت کا دعویٰ پیش کردیا تاحال گورنر نے کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے ۔ دریں اثناء بی جے پی کارکنوں سے دہلی میں خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نریندر مودی نے کرناٹک میں اپنی پارٹی کی کامیابی کی ستائش کرتے ہوئے اسے عدیم النظیر قرار دیا ۔ غلام نبی آزاد نے کہا کہ ہم کسی بھی صورتحال کا سامنا کرنے تیار ہیں ۔ بی جے پی اور کانگریس کے کئی قائدین نئی دہلی کے بجائے بنگلورو میں عارضی طور پر قیام کئے ہوئے ہیں ۔ کانگریس نے چیف منسٹر کے عہدہ کیلئے جے ڈی ایس کے کمارا سوامی کا نام تجویز کیا ہے اور ان کی تائید کا تیقن دیا ہے ۔ قومی صدر بی جے پی امیت شاہ نے کہا کہ آئندہ تمام انتخابات میں ان کی پارٹی بھی کامیاب رہے گی ۔ انہوں نے کہا کہ کرناٹک کے عوام نے خاندانی سیاست کو مسترد کردیا ہے ۔ کرناٹک کے 10 وزراء کو انتخابات میں شکست کا سامنا ہوا ۔ یدی یورپا نے کہا کہ کرناٹک عوام نے سدارامیاحکومت کو مسترد کردیا ہے ۔

 

گورنر اور تشکیل حکومت کی دعوت ،کچھ الگ ہے بی جے پی کا دور

نئی دہلی ۔ /15 مئی (سیاست ڈاٹ کام) میگھالیہ مارچ 2018 ء : اسمبلی نشستیں 60 ، کانگریس 21 ، بی جے پی دو لیکن بی جے پی کو گورنر نے مابعد انتخابات اتحاد کی بنیاد پر تشکیل حکومت کی دعوت دی ۔ گوا مارچ 2017 ء اسمبلی نشستیں 40 :کانگریس 17 ، بی جے پی 12 ، بی جے پی کو مابعد انتخابی اتحاد کی بنیاد پر تشکیل حکومت کی دعوت دی گئی ۔منی پور مارچ 2017 ء اسمبلی نشستیں : 60 ، کانگریس 28 ، بی جے پی 21 ، بی جے پی کو مابعد انتخابی اتحاد کی بنیاد پر تشکیل حکومت کی دعوت دی گئی ایک آزاد امیدوار کو امپھال ایرپورٹ پر صیانتی محکموں نے حراست میں لے لیا اور بعد میں بی جے پی کے حوالے کردیا۔

TOPPOPULARRECENT