Saturday , September 22 2018
Home / شہر کی خبریں / کرنسی تنسیخ کے بعد اے ٹی ایم کی حالت ابھی تک ابتر

کرنسی تنسیخ کے بعد اے ٹی ایم کی حالت ابھی تک ابتر

بیشتر بینکوں کے اے ٹی ایمس بند ، عوام کو حصول رقومات کے لیے مشکلات
حیدرآباد۔5اپریل(سیاست نیوز) کرنسی تنسیخ کے بعد سے شہر کے اے ٹی ایم مراکز کی جو صورتحال بنی ہوئی ہے اس سے عوام کو تو تکالیف کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے لیکن اس کے ساتھ ساتھ بیشتر بینکوں کے اے ٹی ایم مراکز کو بند کیا جانے لگا ہے اور مشینیں واپس لیجائی جانے لگی ہیں۔ پرانے شہر میں کرنسی تنسیخ کے بعد کرنسی نوٹوں کی قلت اور عوام کو نقد کیلئے ہونے والی تکالیف کو دور کرنے کی کوشش کے بجائے پرانے شہر میں اے ٹی ایم مراکز بند کرنے کا نیا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے لیکن اس مسئلہ پر کوئی آواز اٹھانے والا نہیں ہے۔ پرانے شہر کے بیشتر تمام علاقوں میں کئی اہم اور سرکردہ بینکوں کے اے ٹی ایم مراکز موجود ہیں اور ہر جگہ کی طرح اے ٹی ایم مراکز میں نقد نہ ہونے کی شکایت بھی پرانے شہر میں عام ہے لیکن پرانے شہر میں ایک نئی چیز یہ دیکھنے کو مل رہی ہے کہ کئی اہم اور سرکردہ بینکوں کی جانب سے پرانے شہر میں موجود ان کے اپنے اے ٹی ایم مراکز کو بند کیا جانے لگا ہے اور یہ کہا جا رہاہے کہ جب اے ٹی ایم میں نقد رقومات ہی نہیں ہیں اور عوام کو تکالیف کا سامنا کرنا پڑ رہاہے تو ایسی صورت میں اے ٹی ایم کی ملگی کا کرایہ اور اے سی کے اخراجات کے علاوہ چوکیدار کی تنخواہ کیوں دی جائے ؟ شہر کے بیشتر اے ٹی ایم مراکز میں نقد رقم نہ ہونے کی شکایت اب بھی موجود ہے لیکن پرانے شہر میں آئی سی آئی سی آئی ‘ اسٹیٹ بینک آف انڈیا ‘ کنارا بینک‘ آندھرا بینک کے علاوہ دیگر کئی بینکوں کے اے ٹی ایم مراکز کو بند کردیا گیا ہے اور بینک عہدیداروں کی جانب سے جو استدلال پیش کیا جا رہاہے وہ یہی ہے کہ جب ان اے ٹی ایم مراکز کے ذریعہ نہ عوام کو فائدہ حاصل ہورہا ہے اور نہ بینکوں کی آمدنی میں اضافہ ہورہا ہے بلکہ ان اے ٹی ایم مراکز کے سبب بینکوں میں نقد رقومات نہ ہونے کی افواہیں پھیل رہی ہیں اور اس کے علاوہ بینکوں پر اے ٹی ایم مراکز کے اخراجات بوجھ بننے لگے ہیں اسی لئے بینکوں کی جانب سے اے ٹی ایم مراکز کو بند کرنے کے سلسلہ میں اقدامات کئے جا رہے ہیں لیکن اس بات کو بھی یقینی بنانے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ کم از کم ایک علاقہ میں بینک کے اے ٹی ایم مراکز موجود رہیں تاکہ بینک کھاتہ داروں کو اپنے کھاتہ میں جمع رقم کو منہاء کرنے میں کوئی دشواری نہ ہونے پائے اسی لئے بینک کی شاخ کے ساتھ موجود اے ٹی ایم مراکز کو ہمہ وقتی اے ٹی ایم کے طور پر استعمال کیا جا نے لگا ہے جو کہ بینکوں اور صارفین دونوں ہی کے لیے فائدہ مند ہے۔

TOPPOPULARRECENT