Friday , June 22 2018
Home / شہر کی خبریں / کرن کمار کی کانگریس سے غداری ، چیف منسٹری کے دور کی تحقیقات پر زور

کرن کمار کی کانگریس سے غداری ، چیف منسٹری کے دور کی تحقیقات پر زور

حیدرآباد ۔ 19 ۔ فروری : ( سیاست نیوز ) : ریاستی وزیر لیبر مسٹر ڈی ناگیندر نے کرن کمار ریڈی پر کانگریس سے غداری کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ نئی حکومت تشکیل پانے کے بعد بحیثیت چیف منسٹر کرن کمار ریڈی نے جو بھی معاملت کیے ہیں اس کی تحقیقات کرائی جائے گی ۔ انہوں نے حیدرآباد پر چند شرائط لاگو کرنے پر اعتراض کیا ۔ آج سی ایل پی آفس اسمبل

حیدرآباد ۔ 19 ۔ فروری : ( سیاست نیوز ) : ریاستی وزیر لیبر مسٹر ڈی ناگیندر نے کرن کمار ریڈی پر کانگریس سے غداری کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ نئی حکومت تشکیل پانے کے بعد بحیثیت چیف منسٹر کرن کمار ریڈی نے جو بھی معاملت کیے ہیں اس کی تحقیقات کرائی جائے گی ۔ انہوں نے حیدرآباد پر چند شرائط لاگو کرنے پر اعتراض کیا ۔ آج سی ایل پی آفس اسمبلی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کرن کمار ریڈی کوئی بڑا توپ نہیں ہے ہم وجئے بھاسکر ریڈی جیسے چیف منسٹر کو بھی دیکھ چکے ہیں ۔ کانگریس پارٹی نے وزارت کا تجربہ نہ رکھنے والے کرن کمار ریڈی کو چیف منسٹر بنایا ۔ پارٹی کا احسان مند اور وفادار رہنے کے بجائے انہوں نے پارٹی سے غداری کی ہے ۔ استعفیٰ دینے سے قبل صدر پردیش کانگریس کمیٹی مسٹر بوتسہ ستیہ نارائنا کے علاوہ ساتھی وزراء سے بھی تبادلہ خیال کرنا مناسب نہیں سمجھا ۔ جس کی وہ سخت مذمت کرتے ہیں ۔ کانگریس کی جانب سے سی ڈبلیو سی کے اجلاس میں تلنگانہ کا فیصلہ لینے کے بعد فوری استعفیٰ نہ دینے کی سابق چیف منسٹر سے وجہ دریافت کی

اور کہا کہ کرن کمار ریڈی کی باتیں سنتے سنتے عوام بدظن ہوگئے ہیں ریاستی وزیر لیبر نے کہا کہ کانگریس ایک قومی جماعت ہے پارٹی سے مستعفی ہونے والے قائدین اپنے مستقبل کے بارے میں غور کرلیں ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کے وفادار رہنے والے پارٹی کے احکامات کو تسلیم کرتے ہیں فیصلہ ہونے سے قبل تجاویز پیش کرنے کی کانگریس میں مکمل آزادی ہے ۔ مگر فیصلہ قبول کرنا کانگریس کے سپاہیوں کی ذمہ داری ہے ۔ کرن کمار ریڈی واحد چیف منسٹر تھے جنہوں نے کانگریس ہائی کمان کے فیصلوں کی خلاف ورزی کی ہے ۔ کرن کی جانب سے نئی پارٹی تشکیل دینے کے سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ یہ اچھی بات ہے پارٹی تشکیل دینے کے بعد انہیں اپنی اوقات کا اندازہ ہوجائے گا ۔ چیف منسٹر اور ان کے بھائی نے تلنگانہ کا فیصلہ ہونے کے بعد بڑے بڑے معاملت کیے ہیں جس کی تحقیقات ضروری ہے ۔ علحدہ تلنگانہ ریاست میں نئی حکومت تشکیل پانے کے بعد ان سب کی تحقیقات کرائی جائے گی ۔۔

TOPPOPULARRECENT