Thursday , December 13 2018

کریمیا میں تاتاری اقلیت کی مدد کیلئے ترکی کا عہد

انقرہ ۔ 15 ۔ مارچ : ( سیاست ڈاٹ کام) : ترکی نے جو یوکرین کے بحران پر تاحال خاموشی کو ترجیح دیتا رہا ہے اب کریمیہ کی نسلی تاتار اقلیت کے تحفظ کے لیے سرگرم ہوگیا ۔ کیوں کہ روس میں دوبارہ انضمام کے لیے اس علاقہ میں رواں ہفتہ ریفرنڈم ہوگا ۔ ترکی کے وزیر اعظم رجب طیب اردغان کریمیہ میں ترکی بولنے والی تاتار اقلیت کی تائید کا عہد کیا ہے انقرہ نے

انقرہ ۔ 15 ۔ مارچ : ( سیاست ڈاٹ کام) : ترکی نے جو یوکرین کے بحران پر تاحال خاموشی کو ترجیح دیتا رہا ہے اب کریمیہ کی نسلی تاتار اقلیت کے تحفظ کے لیے سرگرم ہوگیا ۔ کیوں کہ روس میں دوبارہ انضمام کے لیے اس علاقہ میں رواں ہفتہ ریفرنڈم ہوگا ۔ ترکی کے وزیر اعظم رجب طیب اردغان کریمیہ میں ترکی بولنے والی تاتار اقلیت کی تائید کا عہد کیا ہے انقرہ نے اندیشہ ظاہر کیا ہے کہ 16 مارچ کو ہونے والے ریفرنڈز میں تاتاری اقلیت کو نظر انداز کردیا جائے گا ۔

اردوخان نے روسی صدر ولادیمیر پوٹن سے ٹیلی فون پر بات چیت کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’ کریمیائی تاتاریوں کو ترکی کبھی تنہا نہیں چھوڑ سکتا اور ایسا کبھی بھی نہیں کیا جائے گا ۔ ‘ ترکی کے وزیر خارجہ احمد داؤد اوگلو نے رواں مہینہ کے اوائیل میں یوکریا کے دارالحکومت کیف کا اچانک اور غیر معلنہ دورہ کرتے ہوئے وہاں تاتاری برادری کے نمائندوں اور یوکرین کے عہدیداروں سے بات چیت کی تھی ۔ بعد ازاں کہا تھا کہ ترک بولنے والے تاتاریوں کے حقوق کا تحفظ کیا جائے گا ۔ کریمیا پر روس کا عملا غیر معلنہ کنٹرول ہوگیا ہے ۔ جس کے پیش نظر تاتاریوں میں ماسکو کے بارے میں کئی شکوک و شبہات پیدا ہوگئے ہیں ۔ تاتاریوں کو تاریخ کا وہ دور بھی یاد ہے جب کمیونسٹی روس کے ایک حاکم جوزف اسٹالن نے ہزاروں تاتاریوں کو زبردستی ملک بدر کرتے ہوئے وسطی ایشیائی ممالک کو منتقل کردیا تھا ۔۔

TOPPOPULARRECENT