Friday , November 24 2017
Home / شہر کی خبریں / کسانوں کو ہتھکڑیاں لگانے کی مذمت : گورنمنٹ وہپ پی راجیشور ریڈی

کسانوں کو ہتھکڑیاں لگانے کی مذمت : گورنمنٹ وہپ پی راجیشور ریڈی

اڈیشنل ڈی سی پی کی قیادت میں تحقیقاتی کمیٹی تشکیل ، قصور واروں کے خلاف کارروائی کا عزم
حیدرآباد۔ 12 مئی (سیاست نیوز) گورنمنٹ وہپ پی راجیشور ریڈی نے کھمم میں بعض عہدیداروں کی جانب سے کسانوں کو ہتھکڑی لگانے کے واقعہ کی مذمت کی ہے۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے راجیشور ریڈی نے کہا کہ بعض جیل عہدیداروں کی جانب سے کسانوں کو ہتھکڑی لگانے کی اطلاع پر ایڈیشنل ڈی سی پی کی قیادت میں تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس واقعہ کے لیے جو بھی قصوروار پائے جائیں گے ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔ کسانوں کے مسائل کو سیاسی رنگ دینے کا اپوزیشن پر الزام عائد کیا اور کہا کہ کانگریس اور تلگودیشم اپنے دور حکومت میں کسانوں کی بھلائی کے اقدامات میں ناکام ثابت ہوئے لیکن آج ٹی آر ایس حکومت کو بدنام کرنے کے لیے مہم چلا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت نے گزشتہ تین برسوں کے دوران کسانوں کی بھلائی کے لیے قدم اٹھائے ہیں جس کی مثال ملک کی کوئی اور ریاست پیش نہیں کرسکتی۔ برقی، پانی اور فرٹلائزر کی سربراہی کے سلسلہ میں ٹی آر ایس حکومت کے اقدامات کو نظرانداز نہیں کیا جاسکتا۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے جو خود کسان ہیں، زرعی شعبہ کے مسائل کی یکسوئی کو ہمیشہ اولین ترجیح دی ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ اپوزیشن جماعتیں کسانوں کے بھیس میں غیر سماجی عناصر کو مارکٹ یارڈس لاکر ہنگامہ آرائی کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مارکٹ یارڈ میں کسانوں کی جانب سے گڑبڑ یا احتجاج کی اطلاعات بے بنیاد ہے کیو ںکہ اپوزیشن کے سیاسی کارکن خود کو کسان ظاہر کرتے ہوئے حکومت کو بدنام کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سرکاری عہدیدار ابھی بھی سابق حکومت کی طرح کام کررہے ہیں اگر عہدیدار اپنے رویہ میں تبدیلی نہ لائیں تو ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ راجیشور ریڈی نے کانگریس اور تلگودیشم پر کسانوں سے جھوٹے ہمدردی کا الزام عائد کیا اور کہا کہ انہیں کسانوں کی تائید حاصل نہیں ہورہی ہے۔ مرچ کی امدادی قیمت کے مسئلہ پر کانگریس اور بی جے پی کے احتجاج کو غیر ضروری قرار دیتے ہوئے راجیشور ریڈی نے کہا کہ امدادی قیمت کا تعین مرکزی حکومت کا کام ہے۔ بی جے پی کو چاہئے کہ وہ تلنگانہ میں احتجاج کے بجائے امدادی قیمت کے تعین کے سلسلہ میں مرکز سے نمائندگی کرے۔ انہوں نے مرکز سے مطالبہ کیا کہ مرچ کے لیے فی کونٹل 7 ہزار روپئے امدادی قیمت کا اعلان کیا جائے۔ راجیشور ریڈی نے کہا کہ مرچ کے کسانوں کے مسائل پر تلنگانہ حکومت نے مرکزی حکومت کو مکتوب روانہ کیا تھا لیکن آج تک اس کا جواب موصول نہیں ہوا ہے۔ مرکزی حکومت فی کنٹل 5 ہزار روپئے فراہم کررہی ہے جبکہ ٹی آر ایس حکومت 6,500 تا 7 ہزار روپئے ادا کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کے نام پر احتجاج سے اپوزیشن کو کوئی فائدہ حاصل نہیں ہوگا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT