Saturday , September 22 2018
Home / شہر کی خبریں / کسانوں کو 24 گھنٹے برقی سربراہی مرکزی حکومت کا کارنامہ

کسانوں کو 24 گھنٹے برقی سربراہی مرکزی حکومت کا کارنامہ

ٹی آر ایس کی تلنگانہ حکومت کے دعویٰ میں کوئی سچائی نہیں : بنڈارو دتاتریہ

حیدرآباد 21 جنوری (سیاست نیوز) سابق مرکزی وزیر و رکن پارلیمان بی جے پی مسٹر بنڈارو دتاتریہ نے پرزور الفاظ میں کہاکہ تلنگانہ میں بی جے پی ہی ٹی آر ایس کی متبادل ہوگی۔ آج اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انھوں نے ٹی آر ایس کی زیرقیادت حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا اور کہاکہ ریاستی حکومت نے کسانوں کو 24 گھنٹے مفت برقی سربراہی کا چیف منسٹر چندرشیکھر راؤ اپنے سر باندھ لینے کی کوشش کی جبکہ حقیقت تو یہ ہے کہ اس کو مرکزی حکومت نے فراہم کیا۔ اگر مرکزی حکومت برقی فراہمی کے لئے کوئی اقدامات نہیں کرتی تو آیا تلنگانہ حکومت ریاستی عوام بشمول کسانوں کو 24 گھنٹے برقی سربراہ کرسکتی تھی۔ انھوں نے بتایا کہ ریاست میں آبپاشی پراجکٹس کے تعمیری کاموں کے لئے مرکزی حکومت نے تلنگانہ حکومت کو بڑے پیمانے پر مالی مدد فراہم کرنے کے اقدامات کی ہے اور بالخصوص گزشتہ دو سال کے دوران مشن بھگیرتا کے کاموں کی انجام دہی کے لئے مرکزی حکومت نے 3900 کروڑ روپئے مشن کاکتیہ کے کاموں کے لئے 677 کروڑ روپئے کی امداد فراہم کی۔ اس طرح ریاست تلنگانہ میں مختلف پراجکٹس کے کاموں کی تیزی کے ساتھ انجام دہی کو یقینی بنانے میں مرکزی حکومت تلنگانہ حکومت کے ساتھ مکمل تعاون کررہی ہے تاکہ ان کاموں کی انجام دہی کے ذریعہ تلنگانہ عوام کو جلد سے جلد راحت فراہم ہوسکے۔ دتاتریہ نے مختلف سوالات کے جواب دیتے ہوئے کہاکہ وہ کسی ریاست کے گورنر عہدے کو قبول نہیں کریں گے بلکہ وہ تلنگانہ کے عوام کے ساتھ ہی رہیں گے۔ آئندہ منعقد شدنی انتخابات میں بھی مقابلہ کریں گے۔ انھوں نے حکومت تلنگانہ کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ مرکزی حکومت سے ممکنہ حد تک زیادہ سے زیادہ مالی امداد فراہم کی جارہی ہے۔ اس کے باوجود تلنگانہ حکومت مالی امداد فراہم نہ کرنے کا مرکزی حکومت پر الزام عائد کیا جو مناسب بات نہیں ہے۔ بالخصوص چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ کی جانب سے ریاست تلنگانہ کو فنڈس جاری نہ کرنے کے مرکزی حکومت پر الزامات ٹھیک بات نہیں ہے۔

TOPPOPULARRECENT