Tuesday , December 12 2017
Home / شہر کی خبریں / کسی بھی فن کو چھوٹا نہ سمجھیں ، فن میں مہارت کا مشورہ : مجاہد حسین

کسی بھی فن کو چھوٹا نہ سمجھیں ، فن میں مہارت کا مشورہ : مجاہد حسین

حیدرآباد کے تعلیم یافتہ نوجوان کو امریکہ میں مختصر وقت میں مہندی ڈیزائن میں شہرت
حیدرآباد ۔10 ۔ دسمبر ( سید اسمعیل ذبیح اللہ ) ۔ محنت لگن اور جستجو انسان کو ترقی کی راہوں پر پہنچاتی ہے ۔ اس کی ایک مثال شہر حیدرآباد کے ایک سپوت مجاہد حسین کی زندگی ہے جنھوں نے نویں جماعت سے ہی مہندی ڈیزایننگ کو اپنا ہنر بناکر نہ صرف شہرت اور مقبولیت حاصل کی بلکہ اپنے گھروالوں کے کفیل بننے کا بھی انہیں اعزاز حاصل ہوا۔ نئے شہر حیدرآباد کے مانصاحب ٹینک علاقے کے رہائش پذیر مجاہد حسین ان دنوں امریکہ میں مہندی ڈیزایننگ کے فن سے شہرت او رمقبولیت حاصل کرلیا ہے ۔ مجاہد حسین کا غریب خاندان سے تعلق ہے مگر انہوں نے اپنی غریبی کو اپنی کمزوری کے بجائے طاقت بنائی اور نویں جماعت سے مہندی ڈائزیننگ کے فن میں مہارت حاصل کر کے فن کو اپنا ذریعہ معاش بنایا ۔ مگر دولت کمانے اور فن کے جنون نے مجاہد حسین کو تعلیم سے دور نہیں کیا ۔ انہوں نے مہندی ڈیزائن کے فن کو تعلیم کا ذریعہ بھی بنایا۔ شہر حیدرآبادکے اس نوجوان نے حیدرآباد سے ایم بی اے کی تعلیم حاصل کی اور اس دوران شہر حیدرآباد کے وی آئی پی او روی وی آئی پی خاندانوں میںہونے والی شادیوں کے موقع پر خواتین کے ہاتھوں پر مہندی ڈائزین ڈالکر شہرت او ردولت بھی حاصل کی اور حیدرآباد کے نوجوانوں کو یہ پیغام دیا کہ جستجو او رلگن کے ساتھ کام کرنے والے کسی میدان میں پیچھے نہیں رہتے ۔ اپنے فن سے حاصل پیسوں سے مجاہد حسین نے اپنی دوبہنوں اور ایک بھائی کی شادی کی ۔ اس دوران مجاہد حسین نے امریکہ جانے کا ارادہ کیا۔ مجاہد حسین نے امریکہ پہنچنے کے بعد بھی تعلیم کے سلسلہ کو جاری رکھا اور یویس اے سے بھی ایم بی اے فینانس کی ڈگری حاصل کی اس دوران امریکہ میںبحیثیت مہندی ڈائزینر مجاہد حسین نے کامیابی کے جھنڈے لہرائے اور شہر حیدرآباد کی نمائندگی کرتے ہوئے ، انہوں نے فبروری 2015کو امریکہ کے کیلیفورنیہ کے ایل اے میں ہوئے مہندی ڈائزیننگ مقابلے سینئر انسٹرکٹر کی حیثیت سے خدمات انجام دئیے اس کے علاوہ اسپرینگ تیھنک نامی ایک تنظیم کی جانب سے منعقد کئے گئے مہندی ڈیزایننگ مقابلہ میںبھی انہوں نے سینئر انسٹرکٹر کا کام کیا۔ اسی طرح مہارانی ویڈنگ نامی ویب سائیڈ انتظامیہ نے مجاہد حسین کا بحیثیت وینڈر رضاکارانہ طور پر انتخاب عمل میںلایا۔آرٹس اور ڈیزائین سے دلچسپی نے مجاہد حسین کو مہندی ڈیزایننگ کے فن سے جوڑا جو مجاہد حسین کا ذریعہ معاش بھی بنا۔ مجاہد حسین نے ہم سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ اگر وہ مہندی ڈیزایننگ کے فن میںمہارت حاصل کرنے میںہچکچاہٹ محسوس کرتے تو ممکن تھا کہ وہ بھی تعلیم او راپنے گھرو الوں کی خدمت سے محروم رہتے ۔ انہوں نے کہاکہ کام یاہنر چھوٹا یا بڑا نہیں ہوتا بلکہ انسان کی سونچ اس کو چھوٹا یا بڑا بنادیتی ہے ۔ اگر ہم چھوٹے بڑے کے فرق کو محسوس کرنے کے بجائے جستجو او رلگن کے ساتھ جس میں بھی دلچسپی ہے اس فن میںمہارت حاصل کرنے کی کوشش کریں گے تو کامیابی یقینی ہے۔ دو سال کے مختصر وقفہ میں امریکہ میںشہرت سے بڑی خوشی ایک حیدرآباد ی ہونے کی حیثیت سے ملک اور ملت کی نمائندگی کا جو مجھے اعزاز حاصل ہوا ہے اس سے بڑا تحفہ میرے لئے کچھ نہیں ہے۔انہوں نے کہ حیدرآباد کی تاریخی نمائش میںمنعقدہ مہندی ڈئزایننگ مقابلہ میںتین سو لڑکیو ں کے مقابلے میںانہیں انعام اول حاصل ہوا تھا ۔ مجاہد حسین نے آج کی نوجوان نسل کو پیغام دیتے ہوئے کہاکہ کسی بھی فن کو چھوٹا سمجھنے کے بجائے اس میںمہارت حاصل کرتے ہوئے اس فن کو بڑا او رکامیابی کا ذریعہ بنانے والے ہی کامیاب زندگی گذار سکتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT