Saturday , January 20 2018
Home / ہندوستان / کسی مذہب کو سرکاری موقف نہیں دیا جانا چاہئے

کسی مذہب کو سرکاری موقف نہیں دیا جانا چاہئے

نائب صدر جناب حامد انصاری کا خطاب ‘ مذہب بدلنا شہری کا بنیادی حق

نائب صدر جناب حامد انصاری کا خطاب ‘ مذہب بدلنا شہری کا بنیادی حق
نئی دہلی 23 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) تبدیلی مذہب پر تنازعہ کے دوران نائب صدر جمہوریہ جناب حامد انصاری نے آج کہا کہ کسی فرد کا مذہب یا عقیدہ بدلنا اسکا بنیادی حق ہے اور کسی بھی مذہب کو سرکاری موقف نہیں دیا جانا چاہئے ۔ یہاں ایک سالانہ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جناب حامد انصاری نے سکیولرازم کے تئیں ہندوستان کے رویہ کی قتائش کی اور کہا کہ سکیولرازم مذاہب کے مابین علیحدگی کی دیوار کھڑی نہیں کرتا بلکہ وہ ان کے درمیان اصولی فاصلہ رکھتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سکیولرازم کے تئیں یقین اور اس پر عمل کے درمیان بھی فرق ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستانی سکیولرازم کسی بھی مذہب کو سرکرای موقف نہیں دیتا اور ایسا ہونا بھی نہیں چاہئے ۔ ہمارا سکیولرازم کسی بھی مذہب کے استبدادانہ موقف کو بھی قبول نہیں کرتا ۔ نائب صدر جمہوریہ کے ریمارکس اس پس منظر میں اہمیت کے حامل ہیں کیونکہ ملک میں تبدیلی مذہب پر تنازعہ چل رہا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT