Saturday , February 24 2018
Home / ہندوستان / کشمیر:سنگباری کے مرتکبین کو ’عام معافی‘، 4500نوجوانوں کو راحت

کشمیر:سنگباری کے مرتکبین کو ’عام معافی‘، 4500نوجوانوں کو راحت

سرینگر؍نئی دہلی، 23نومبر (سیاست ڈاٹ کام ) جموں وکشمیر میں محبوبہ مفتی کی قیادت والی پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی ) اور بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی)مخلوط حکومت نے وادی میں نوجوانوں کے دل جیتنے کے لئے سنگباری میں ملوث افراد کو عام معافی دینے کا اعلان کردیا ہے ۔تاہم یہ ’عام معافی‘ یا ’ایمنسٹی‘ صرف ایسے سنگ بازوں کے لئے ہے جن کے خلاف پولیس تھانوں میں ایک سے زیادہ مرتبہ ایف آئی آردرج نہیں ہوئی ہے ۔ اس عام معافی کے تحت سنگ باری کی وجہ سے پہلی بار جیل جانے والے نوجوانوں کے خلاف درج ایف آئی آرز واپس لے لی جائیں گی۔ ذرائع نے بتایا کہ سنگ بازوں کو عام معافی دینے کا اعلان مرکزی سرکار کے ’کشمیر نمائندہ ‘دنیشور شرما کی سفارش پر کیا گیا ہے ۔وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے عام معافی کا اعلان گذشتہ رات مائیکرو بلاگنگ کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے سلسلہ وار ٹویٹس میں کیا۔ انہوں نے کہا ‘سنگ باری کا پہلی بار ارتکاب کرنے والے نوجوانوں کے خلاف درج ایف آئی آر کی واپسی کا سلسلہ دوبارہ شروع کرنے سے مجھے انتہائی اطمینان مل گیا ہے ۔ میری حکومت نے یہ عمل مئی 2016 میں شروع کیا تھا۔ لیکن بدقسمتی سے گذشتہ برس کی بدامنی کی وجہ سے یہ سلسلہ رک گیا تھا۔ محبوبہ مفتی نے کہا کہ اعتماد سازی کے اس اقدام سے مرکزی حکومت کے جموں وکشمیر میں بیانیہ کو بدلنے اور پائیدار مذاکرات کے لئے مفاہمتی ماحول پیدا کرنے کے عزم کا اعادہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہاکہ یہ حوصلہ افزا ہے کہ مذاکرات کار (دنیشور شرما) نے اپنا کام مثبت انداز میں شروع کیا ہے ۔ ان کی سفارشات کو دونوں مرکزی اور ریاستی حکومت سنجیدگی سے لے رہی ہیں۔ محبوبہ مفتی نے کہا کہ ایف آئی آرز کی واپسی سے نوجوانوں کو اپنی زندگیاں سنوارنے کا موقع ملے گا۔ انہوں نے ٹویٹ میں کہا کہ یہ اقدام جواں سال نوجوانوں اور ان کے کنبوں کے لئے امید کی کرن ہے ۔ اس سے انہیں اپنی زندگی دوبارہ سنوارنے کا موقع فراہم ہوگا۔ باوثوق ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ دنیشور شرما نے گذشتہ ہفتے دارالحکومت دہلی میں مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کو جو ابتدائی رپورٹ سپردکی، اس میں دیگر متعدد سفارشات کے ساتھ ساتھ سنگ بازوں کو عام معافی دینے کی سفارش بھی کی گئی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ اس رپورٹ کا جائزہ لینے کے بعد مرکزی وزارت داخلہ نے ریاستی حکومت سے کہا کہ سنگ باری کی وجہ سے پہلی بار جیل جانے والے نوجوانوں کے خلاف درج ایف آئی آرز واپس لے لی جائیں۔ذرائع نے بتایا کہ اس پالیسی سے قریب 4500 نوجوانوں کو راحت ملے گی۔ انہوں نے بتایا کہ اگرچہ کشمیر میں سنگ باری کے واقعات کے سلسلے میں ہزاروں ایف آئی آرز درج ہیں، تاہم اس ایمنسٹی سے سنگ باری کا پہلی بار ارتکاب کرنے والے نوجوانوں کو راحت ملے گی۔ انہوں نے بتایا کہ ایمنسٹی پالیسی پر عمل درآمد سے قبل تمام ایجنسیوں بشمول سیکورٹی فورس اداروں کے عہدیداران کو بھی اعتماد میں لیا گیا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اس ایمنسٹی کا اعلان مذاکرات کار دنیشور شرما کے دوسرے دورہ کشمیر سے محض تین روزہ قبل کیا گیا۔ذرائع نے بتایا کہ دنیشور شرما مذاکرات کے دوسرے مرحلے کا آغاز 24 نومبر کو جموں سے کریں گے ۔ وہ 26 نومبر سے کشمیر میں رہیں گے اور قیام کے دوران جنوبی کشمیر کا دورہ کریں گے ۔

TOPPOPULARRECENT