Friday , June 22 2018
Home / Top Stories / کشمیر:میدانی علاقوں میں بارش اور بالائی علاقوں میں برفباری

کشمیر:میدانی علاقوں میں بارش اور بالائی علاقوں میں برفباری

سری نگر ، 2 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) جموں وکشمیر کے میدانی علاقوں میں جمعرات اور جمعہ کی شب سے بارشوں کا سلسلہ وقفہ وقفہ سے جاری ہے ۔بالائی علاقوں بشمول عالمی شہرت یافتہ سکی ریزارٹ گلمرگ میں تازہ برف باری ہوئی ہے ۔ تازہ بارشوں اور برف باری کے سبب ریاست بھر میں رات کے درجہ حرارت میں بہتری جبکہ دن کے درجہ حرارت میں کمی ریکارڈ کی گئی ہے ۔محکمہ موسمیات کے ایک ترجمان نے یو این آئی کو بتایا کہ ریاست کے بیشتر مقامات پر ہلکی سے درمیانہ درجہ کی بارش یا برف باری کا سلسلہ اگلے چوبیس گھنٹوں تک جاری رہ سکتا ہے ۔انہوں نے بتایا ‘خطہ میں مغربی ہواؤں کے زیر اثر بارش اور برف باری کا سلسلہ ہفتہ کو بھی جاری رہ سکتا ہے ۔ تاہم اتوار کے روز سے موسم میں بہتری آنا شروع ہوگی’۔ سری نگر کے شمال میں 55 کلو میٹر کی دوری پر واقع عالمی شہرت یافتہ سکی ریزارٹ گلمرگ میں قریب چار انچ تازہ برف کھڑی ہوگئی ہے ۔تازہ برف باری کے نتیجے میں گلمرگ میں موجود سیاحوں اور سکی کھلاڑیوں کے چہرے خوشی سے کھل اٹھے ہیں۔ گلمرگ سے ایک ہوٹل مالک نے یو این آئی کو فون پر بتایا کہ تازہ برف باری کا سلسلہ گذشتہ نصف شب کو شروع ہوا۔صبح کے وقت تک قریب چار انچ تازہ برف کھڑی ہوگئی۔ کٹھن موسمی حالات کے باوجود یہاں موجود سیاح اور دیگر لوگ سیر سپاٹے میں مصروف ہیں۔ سیاحوں میں بیشتر ایسے ہیں جنہوں نے پہلی بار برف کو گرتے ہوئے دیکھا ہے ۔محکمہ موسمیات کے ترجمان نے بتایا کہ گلمرگ میں گذشتہ رات کم سے کم درجہ حرارت منفی 1.6ڈگری ریکارڈ کیا گیا۔ سری نگر کے جنوب میں قریب 100 کلو میٹر کی دوری پر واقع مشہور سیاحتی مقام پہلگام میں گذشتہ رات سے بارشوں کا سلسلہ وقفہ وقفہ سے جاری ہے ۔ پہلگام میں گذشتہ رات کم سے کم درجہ حرارت 1.9ڈگری ریکارڈ کیا گیا ہے ۔

 

کشمیر ہائی وے بند
سرینگر، 2 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) وادی کشمیر کو ملک کے دیگر حصوں سے جوڑنے والی سرینگر-جموں قومی شاہراہ تودے گرنے کی وجہ سے آج ٹریفک کے لئے بند کر دی گئی۔ ٹریفک پولس کے ایک افسر نے یو این آئی کو بتایا کہ دگڈول سمیت دیگر مقامات پر تودے گرنے کی وجہ سے سرینگر-جموں قومی شاہراہ کو صبح سے بند کر دیا گیا ہے ۔ حکام نے مشینیں اور ملازمین کو راستے سے مٹی اور پتھر ہٹانے کے کام میں لگایا ہے ۔ اس دوران بڑی تعداد میں کشمیر جانے والی گاڑیاں خاص طور سے ضروری سامان سے لدے ٹرک ہائی وے پر پھنسے ہوئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT