Monday , September 24 2018
Home / ہندوستان / کشمیر میں دوسرے نوجوان کی اختیاری گھر واپسی

کشمیر میں دوسرے نوجوان کی اختیاری گھر واپسی

سری نگر۔ 17 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) جنوبی کشمیر میں ایک اور نوجوان نے مسلح عسکری گروپ سے ناطہ توڑ کر گھر واپسی اختیار کی ہے ۔ وادی میں گذشتہ دو مہینوں کے دوران قریب 7 مقامی جنگجوؤں نے سیکورٹی فورسز کے سامنے خودسپردگی اختیار کی ہے ، تاہم سیکورٹی اداروں نے اس رجحان کو گھر واپسی کا نام دیا ہے ۔ ریاستی پولیس کے ایک عہدیدار نے یو این آئی کو بتایا ‘ مزید ایک نوجوان نے والدین کی اپیل پر تشدد کا راستہ چھوڑ کر گھر واپسی اختیار کی ہے ‘۔ تاہم انہوں نے گھر واپسی اختیار کرنے والے نوجوانوں کی شناخت ظاہر کرنے سے اجتناب کیا۔ ریاستی پولیس نے اپنے آفیشل ٹویٹر اکاؤنٹ پر ایک ٹویٹ میں کہا ‘بھٹکے نوجوانوں کو قومی دھارے میں شامل کرنے کی ہماری کوششوں کے نتیجے میں حال ہی میں جنگجوؤں کی صفوں میں شامل ہونے والے ایک نوجوان نے تشدد کا راستہ ترک کرکے گھر واپسی اختیار کی ہے ۔ گھر واپسی اختیار کرنے والے نوجوان کی شناخت پوشیدہ رکھی گئی ہے ۔ میڈیا سے گذارش ہے کہ وہ اس کی سلامتی کو ملحوظ نظر رکھ کر کوئی شناختی تفصیلات شائع نہ کریں’۔گھر واپسی اختیار کرنے والے نوجوان کا بھی تعلق جنوبی کشمیر سے ہی ہے ۔ جنوبی کشمیر کے ڈپٹی انسپکٹر جنرل آف پولیس ایس پی پانی نے کہا ‘جنوبی کشمیر پولیس کی کوششوں کے نتیجے میں ایک اور نوجوان قومی دھارے میں شامل ہوگیا ہے ۔ سیکورٹی وجوہات کی بناء پر مذکورہ نوجوانوں کی شناخت محفوظ کرلی گئی ہے ‘۔ فوج کی ویکٹر فورس کے جنرل آفیسر کمانڈنگ (جی او سی) میجر جنرل بی ایس راجو نے یو این آئی کو گذشتہ ہفتے بتایا ‘سیکورٹی وجوہات کی بناء پر اب خودسپردگی اختیار کرنے والے جنگجوؤں کی تفصیلات منکشف نہیں کی جائیں گی’۔ انہوں نے بتایا کہ خودسپردگی اختیار کرنے والے جنگجوؤں کو ان کی دلچسپی اور صلاحیتوں کے عین مطابق بحال کیا جائے گا۔ جنوبی کشمیر میں جنگجو بننے والے نوجوانوں کی گھر واپسی کا رجحان فٹ بالر سے لشکر طیبہ جنگجو بننے والے 20 سالہ ماجد خان عرف شان پولاک نے پیدا کیا۔ ماجد خان نے 16 نومبر کی شام کو ضلع اننت ناگ کے کھنہ بل میں واقع 1 راشٹریہ رائفلز (آر آر) کے کیمپ میں خودسپردگی اختیار کی تھی۔

TOPPOPULARRECENT