Wednesday , December 13 2017
Home / سیاسیات / کشمیر پر بات چیت کی تازہ پہل مشکوک: کانگریس

کشمیر پر بات چیت کی تازہ پہل مشکوک: کانگریس

نئی دہلی، 24 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) راجیہ سبھا میں حزب اختلاف کے لیڈر غلام نبی آزاد نے جموں و کشمیر میں تمام فریقوں سے بات چیت کی حکومت کی تازہ پہل کو مشکوک قراردیتے ہوئے کہا کہ اس سلسلے میں حکومت کی نیت پر شبہ ہورہا ہے اور انہیں ایسا محسوس ہوتاہے کہ اس کا مقصد محض تشہیرکرنا ہے ۔ آزاد نے یہاں ایک پریس کانفرنس میں نامہ نگاروں کے سوالات پر کہا کہ مودی حکومت نے ساڑھے تین سال بیکار کر دیئے اور اب مدت کے اختتام پر بات چیت کی پہل کی ہے ۔ اس کے علاوہ، مذاکرات کا کوئی وقت نہیں مقرر کیا گیا ہے جس سے اس کی نیت پر شبہ ہورہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ مودی حکومت ساڑھے تین سال ’ سختی برتنے ‘کی بات کرتی رہی جبکہ کانگریس سمیت تمام اپوزیشن پارٹیاں پارلیمنٹ کے اندر اور باہر باہمی اعتماد کو بحال کرنے کے اقدامات اٹھانے اور تمام فریقین سے بات چیت کرنے کا مشورہ دیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے اگر ان کی صلاح کو پہلے ہی مان کر اس طرح کا فیصلہ کیا ہوتا تو سینکڑوں جوان اور بے گناہ شہریوں کی قیمتی جانیں ضائع نہ ہوتیں اور پیلٹ گن سے لوگوں کو اپنی آنکھوں کی روشنی نہیں گنوانی پڑتی ۔کشمیر مسئلے کو سیاسی مسئلہ قرار دیتے ہوئے کانگریس لیڈر نے کہا کہ اس کا حل بھی سیاسی طریقے سے ہی نکلے گا لیکن حکومت کو یہ بات دیر سے سمجھ میں آئی۔واضح رہے کہ مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے خفیہ بیورو کے سابق سربراہ دنیشور شرما کو جموں کشمیر میں تمام فریقوں سے بات چیت کے لئے مرکز کا نمائندہ مقرر کرنے کا کل اعلان کیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT