Tuesday , December 12 2017
Home / ہندوستان / کشمیر پر مذاکرات: مرکز واجپائی فارمولہ اپنائے: عمر فاروق

کشمیر پر مذاکرات: مرکز واجپائی فارمولہ اپنائے: عمر فاروق

سرینگر۔25 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) علیحدگی پسند قائدین میں اعتدال کی راہ اختیار کرنے والے میر واعظ عمر فاروق نے آج کہا کہ وہ مرکز کے ساتھ غیر مشروت بات چیت کے لیے آمادہ ہیں لیکن کہا کہ اس میں کامیابی کا بہترین امکان تب ہوگا جب مرکز واجپائی حکومت کا نظریہ اختیار کرے جو اوائل دہا 2000ء میں اپنایا گیا تھا۔ عمر فاروق کشمیریوں کے مذہبی سربراہ یا میر واعظ ہیں، انہوں نے نشاندہی کی کہ واجپائی فارمولہ میں تمام فریقین شامل ہوئے، جو بیک وقت تمام متعلقہ فریقوں سے رابطے کا حوالہ ہے جس میں کشمیری علیحدگی پسند قائدین کو نئی دہلی کے ساتھ ساتھ اسلام آباد اور پاکستان مقبوضہ کشمیر میں ان جیسے رہنمائوں کے ساتھ بھی رابطہ قائم کرنے کی اجازت دی جاتی ہے۔ ’’ہم کوئی ایسا میکانزم چاہتے ہیں جس میں ہر کوئی مذاکرات کا حصہ بن سکے۔ ہم اسے محض تصویر کشیدہ موقع بنانا نہیں چاہتے۔‘‘ میر واعظ اپنی قیام گاہ پر نیو ایجنسی پی ٹی آئی کو انٹرویو دے رہے تھے، انہوں نے کہا کہ عمل مذاکرات اب شروع کردینا چاہئے۔ نتائج کی فکر میں پڑے بغیر پہل ضروری ہے لیکن یہ تمام عمل سنجیدگی اور اخلاص کے ساتھ ہونا پڑے گا۔ 44 سالہ میر واعظ نے حال ہی میں مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ کی تجویز کردہ بات چیت کا خیرمقدم کیا تھا، تاہم یہ پہلی مرتبہ ہے کہ انہوں نے واضح انداز میں اظہار خیال کیا جو کچھ ان کی دانست میں 70 سالہ مسئلہ کی یکسوئی کے لیے کامیاب مذاکرات ہوسکتے ہیں۔ پھر بھی ان کی یہ تجویز کہ حکومت واجپائی فارمولے پر واپس جائے، ایسا امکان نہیں کہ حکومت کو اچھا لگے گا کیوں کہ اس عمل میں پاکستان شامل ہوجائے گا۔ میر واعظ نے واضح کیا کہ کشمیر کے تمام حاملین مفادات جن کے تعلق سے بات چیت کرنے کا ارادہ خود راجناتھ سنگھ نے ظاہر کیا، ان میں پاکستانیوں کے ساتھ ساتھ سابقہ جموں اینڈ کشمیر اسٹیٹ کے تمام خطوں کو بھی شامل کرنا چاہئے۔ عمر فاروق جو 1990ء میں حزب المجاہدین کے عسکریت پسندوں کے ہاتھوں اپنے والد میر واعظ فاروق کے قتل کے بعد 16 سال کی عمر میں میر واعظ بن گئے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ حکومت کو بس اتنا ضرور کرلینا چاہئے کہ واجپائی حکومت کے وقت کی پرانی فائیلوں کا اچھی طرح جائزہ لے۔آپ اسے سہ فریقی یا ہمہ رخی میکانزم کہہ لیں لیکن یہی ممکنہ کامیابی کی کلید ہوگی۔

TOPPOPULARRECENT