Monday , January 22 2018
Home / شہر کی خبریں / کشن باغ فساد کی ایڈوکیٹ کمشنر کے ذریعہ پولیس کی غلطیوں کی تحقیقات پر غور

کشن باغ فساد کی ایڈوکیٹ کمشنر کے ذریعہ پولیس کی غلطیوں کی تحقیقات پر غور

دونوں طبقات میں اعتماد کی بحالی کا مشورہ ، چیرمین اقلیتی کمیشن سے مختلف شخصیتوں کی ملاقات پر تیقن

دونوں طبقات میں اعتماد کی بحالی کا مشورہ ، چیرمین اقلیتی کمیشن سے مختلف شخصیتوں کی ملاقات پر تیقن
حیدرآباد۔ 14؍جولائی (سیاست نیوز)۔ کشن باغ عرش محل واقعہ میں پولیس کی غلطیوں کی نشاندہی کے لئے آندھرا پردیش ریاستی اقلیتی کمیشن کی جانب سے ایڈوکیٹ کمشنر کے تقرر کے متعلق سنجیدگی سے غور کیا جارہا ہے۔ جناب عابد رسول خاں صدرنشین آندھرا پردیش ریاستی اقلیتی کمیشن نے آج ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کے دوران یہ بات کہی۔ انھوں نے بتایا کہ دونوں اقلیتی طبقات مسلم اور سکھ کی جانب سے پولیس پر جانبداری کا الزام عائد کیا جارہا ہے اور تحقیقات میں غفلت کی شکایات بھی موصول ہورہی ہیں۔ اس صورتِ حال میں کمیشن نے اس بات کا فیصلہ کیا ہے کہ ایڈوکیٹ کمشنر کے تقرر کے ذریعہ پولیس کی غلطیوں کی تحقیقات کی جائیں۔ انھوں نے بتایا کہ کشن باغ عرش محل میں پیش آئے واقعہ کے سلسلہ میں شرومنی اکالی دل جنرل سکریٹری مہندر پال سنگھ، جسوندر سنگھ سکھ چینل (یوکے)، موہن سنگھ یونائٹیڈ سکھ مشن دہلی، نگاری بابیا پیپلز ڈیموکریٹک فورم بنگلور، سفیان شیخ ایڈوکیٹ، سید منور، سید غوث محی الدین قادری، جناب شرف الدین احمد ایڈوکیٹ، کے ایم شریف چیرمین پاپولر فرنٹ آف انڈیا، مفتی عبدالسبحان، دشویندر سنگھ، ایڈوکیٹ اے محمد یوسف جوائنٹ کنوینر پیس مشن نے صدرنشین آندھرا پردیش اقلیتی کمیشن جناب عابد رسول خان سے ملاقات کرتے ہوئے عرش محل کشن باغ واقعہ پر پیدا شدہ حالات سے واقفیت حاصل کی۔ علاوہ ازیں دونوں اقلیتی طبقات کے درمیان اعتماد کی بحالی کے سلسلہ میں اقدامات کے متعلق اپنی تجاویز پیش کیں۔ صدرنشین اقلیتی کمیشن نے ملاقات کرنے والے وفد کو مشورہ دیا کہ وہ دونوں طبقات میں اعتماد کی بحالی کے لئے کوششوں کا آغاز کریں اور سکھوں کے خلاف کی گئی کارروائی کی جو شکایات منظر عام پر آرہی ہیں، اس کے متعلق شواہد پیش کئے جائیں۔ انھوں نے بتایا کہ وفد نے اس بات کی شکایت کی کہ بعض بے قصور سکھ نوجوانوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے، جس پر کمیشن نے مکمل تفصیلات حاصل کرنے کا تیقن دیا۔ جناب عابد رسول خان نے مزید بتایا کہ کمیشن کی جانب سے مرکزی حکومت کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے مرکزی اسکالرشپس میں اضافہ کی نمائندگی کی جارہی ہے۔ انھوں نے بتایا کہ مرکزی حکومت سے کی جانے والی نمائندگی کے سلسلہ میں کمیشن کی جانب سے اقدامات کئے جارہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ تمام اسکولوں اور کالجس کے ذمہ داران کو اسکالرشپس کے حصول سے متعلق تفصیلات سے واقف کروانے کے لئے کمیشن نے مکتوب روانہ کردیا ہے تاکہ طلبہ اور اساتذہ میں شعور کی بیداری کو یقینی بنایا جاسکے۔

TOPPOPULARRECENT