Sunday , February 25 2018
Home / جرائم و حادثات / کمسن لڑکیوں کی عصمت ریزی کرنے والا ضعیف العمر شخص گرفتار

کمسن لڑکیوں کی عصمت ریزی کرنے والا ضعیف العمر شخص گرفتار

85 سالہ ستیہ نارائن راؤ کے خلاف شی ٹیم کی کارروائی
حیدرآباد ۔ 22 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : راچہ کنڈہ شی ٹیم آج اس وقت شدید تشویش کا شکار ہوگئی جب ایک ہولناک واقعہ کا اس ٹیم کو سامنا کرنا پڑا ۔ خواتین و لڑکیوں کے تحفظ کو اولین ترجیح دینے تشکیل دی گئی شی ٹیم حیرانی میں پڑ گئی ۔ اور فوری ایک 85 سالہ درندہ صفت انسان کو گرفتار کرلیا جس نے ایک سال کے عرصہ میں 6 کمسن لڑکیوں کی عصمت کے ساتھ کھلواڑ کیا ۔ چاکلیٹ کے بہانے لڑکیوں کو بلاکر ان کی عصمت ریزی کرنا اس کی عادت بن گئی تھی تاہم تعجب کی بات تو یہ ہے کہ اس درندے کے خلاف کسی نے آواز نہیں اٹھائی ۔ شی ٹیم جب آج کشائی گوڑہ کے علاقہ میں واقع ہائی اسکول پہونچی جہاں شعور بیداری کا پروگرام منعقد کیا گیا تھا شی ٹیم کے ذمہ دار جب لڑکیوں سے بات کررہے تھے اور ان میں شعور بیدار کرتے ہوئے ان کی حوصلہ افزائی کررہے تھے کہ 6 لڑکیوں نے چونکا دینے والا انکشاف کیا ۔ جو شی ٹیم کے لیے بھی حیرت کا سبب بن گیا ۔ ان کمسن لڑکیوں نے اپنی خوفناک داستان کو سناتے ہوئے خاطی ضعیف شخص کی نشاندہی بھی کرڈالی ۔ پولیس نے فوری طور پر اس 85 سالہ شخص ستیہ نارائن راؤ کو گرفتار کرلیا جو بردھم پوری کالونی ای سی آئی ایل کا ساکن ہے یہ ضعیف درندہ چاکلیٹ اور پیسے دینے کے بہانے لڑکی کو اپنے گھر لے جایا کرتا تھا اور اس کی عصمت ریزی کرتا تھا اور یہ بات کسی کو بتانے پر جان سے مار دینے کی دھمکی بھی دیا کرتا تھا ۔ ذرائع کے مطابق ستیہ نارائن راؤ ریلوے کا ریٹائرڈ ملازم ہے ۔ کشائی گوڑہ پولیس نے مقدمہ درج کرلیا اور مصروف تحقیقات ہے ۔۔

 

کانسٹبل کی خانگی بس ٹکٹ کلکٹر
کو زد و کوب
حیدرآباد۔ 22 نومبر (سیاست نیوز) عابڈز پولیس اسٹیشن سے وابستہ ایک پولیس کانسٹبل نے خانگی بس ٹکٹ کلکٹر کو زدوکوب کیا۔ اس واقعہ کے بعد کل رات دیر گئے شہر کے پاش علاقہ عابڈز میں ٹریفک میں خلل پیدا ہوگیا۔ ذرائع نے بتایا کہ پولیس اسٹیشن عابڈز سے وابستہ دو کانسٹبلس سریندر راتھوڑ اور کرشنا رائے جو نائٹ ڈیوٹی کررہے تھے، جگن ٹرویلس سے وابستہ ایک بس کو روکنے کے بعد ٹکٹ کلکٹر نرسمہا ریڈی کو فوری مین روڈ سے بس ہٹانے کیلئے کہا۔ اسی دوران نرسمہا ریڈی اور پولیس کانسٹبلس سریندر راتھوڑ کے درمیان لفظی جھڑپ ہوگئی جس کے نتیجہ میں کانسٹبلس نے اسے اپنی گاڑی میں لے جاکر پولیس اسٹیشن منتقل کیا۔ پولیس عہدیداروں نے اس واقعہ کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ کانسٹبلس کی جانب سے خانگی بس عملہ کو زدوکوب نہیں کیا گیا جبکہ اس واقعہ کے متعلق کوئی شکایت موصول نہ ہونے پر مقدمہ درج نہیں کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT