Friday , October 19 2018
Home / اضلاع کی خبریں / کمشنریٹ کے قیام کے بعد اختیارات میں اضافہ متوقع

کمشنریٹ کے قیام کے بعد اختیارات میں اضافہ متوقع

نظام آباد میں اعلیٰ عہدیداروں کے احکامات جاری ہونے کا امکان

نظام آباد :20؍ ڈسمبر ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)پولیس کمشنریٹ کے قیام کے بعد اختیارات میں اضافہ کرتے ہوئے احکامات جاری کرنے کی اطلاع ہے ۔ اس خصوص میں اعلیٰ عہدیداروں کی جانب سے احکامات جاری کئے جانے کے امکانات ہیں۔ واضح رہے کہ تلنگانہ حکومت کی جانب سے11؍ اکتوبر 2016ء کے روز اضلاع کی تشکیل جدید عمل میں لائی گئی تھی اور نظام آباد ، کھمم، کریم نگر، راما گنڈم ، سدی پیٹ میں پولیس کمشنریٹ کا قیام عمل میں لایا گیا تھا حالانکہ ڈی آئی جی سطح کے عہدیداروں کو پولیس کمشنر کی حیثیت سے تقرر کرنا ناگزیر تھا ۔ سینئر آئی پی ایس عہدیداروں کی قلت کی بناء پر سینئر سطح کے عہدیداروں کا تقرر کرتے ہوئے پولیس کمشنریٹ کا قیام عمل میں لایا گیا تھا اورپولیس کمشنرکو ہوم گارڈ سے لیکر سرکل انسپکٹر سطح کے عہدیداروں کے تبادلے کے اختیارات رہتے ہیں لیکن مکمل سطح کے کمشنریٹ کا قیام کے بعد ابھی تک اختیارات حاصل نہیں دئیے گئے تھے لیکن ڈی جی پی کے رائے کے بعد ہی انہیں تبادلے کرنے کے اختیارات دئیے گئے تھے ۔ نظم و نسق میں سہولت پیدا کرنے کی غرض سے پولیس کمشنریٹ کو تمام اختیارات دیتے ہوئے احکامات اندرون دو تین یوم میں جاری کئے جانے کے امکانات ہیںاور سینئر آئی پی ایس عہدیداروں کو ترقی دیتے ہوئے جنوری تک ڈی آئی جی سطح کے عہدیدار کو تقرر کئے جانے کے بھی امکانات ہیں اور موجودہ ڈی آئی جی آفس نظام آباد کے بجائے کاماریڈی میں قائم کرنے کے بھی امکانات ہیں ۔ کیونکہ نظام آباد رینج میں نظام آباد کے علاوہ کاماریڈی ، میدک ، سدی پیٹ، سنگاریڈی ، کمشنریٹ شامل ہے اور نظام آباد، سدی پیٹ کمشنریٹ کو ان سے علیحدہ کرتے ہوئے کاماریڈی ، میدک ، سنگاریڈی پر مشتمل رینج قائم کرنے کے امکانات ہیں ۔ اسی کے تحت کاماریڈی میں رینج آفس منتقل کرتے ہوئے اور نظام آباد سدی پیٹ کو علیحدہ کمشنریٹ کی حیثیت سے تمام اختیارات فراہم کرنے کے امکانات ہیں۔

TOPPOPULARRECENT