Friday , December 15 2017
Home / شہر کی خبریں / کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ ملازمین کی خدمات کو مستقل کرنے کا اعلان

کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ ملازمین کی خدمات کو مستقل کرنے کا اعلان

مسلمانوں کے بشمول دیگر طبقات سے انصاف رسانی کے لیے رولز آف ریزرویشن پر عمل : چیف منسٹر کا اسمبلی میں بیان
حیدرآباد ۔ 27 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر نے کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ کی اساس پر کام کرنے والے ایمپلائز کی خدمات کو مستقل کرنے کا اعلان کیا۔ مسلمانوں کے بشمول دوسرے پسماندہ طبقات سے بھی انصاف کرنے کے لیے رولز آف ریزرویشن پر عمل کرنے کا فیصلہ کیا ۔ وقفہ سوالات کے دوران کانگریس کے ارکان اسمبلی ومشی چندر ریڈی ، ٹی جیون ریڈی تلگو دیشم کے رکن اسمبلی آر کرشنیا کی جانب سے پوچھے گئے سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ کے سسٹم کو تلگو دیشم اور کانگریس کی حکومتوں نے رائج کیا ہے ۔ اسمبلی میں بھی ایسے ملازمین ہیں ان کی خدمات کو مستقل بنانے کے لیے ٹی آر ایس حکومت سنجیدگی سے کام کررہی ہے ۔ مگر حیرت کی بات یہ ہے کہ جنہوں نے انہیں کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ پر مامور کیا ہے وہ وہی لوگ عدلیہ سے رجوع ہو کر ایسے ایمپلائز کی خدمات کو مستقل بنانے میں رکاوٹیں پیدا کررہے ہیں جس کے خلاف کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ پر خدمات انجام دینے والے ایمپلائز نے کانگریس کے ہیڈکوارٹر گاندھی بھون پر احتجاجی دھرنا منظم کیا ہے ۔ قانونی رکاوٹوں کے پیش نظر کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ پر خدمات انجام دینے والے ایمپلائز کی تنخواہوں میں اضافہ کیا گیا ہے ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ جب کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ پر تقررات کیے گئے تھے تب چند محکمہ جات میں رولز آف ریزرویشن پر عمل ہوا ہے ۔ چند محکمہ جات میں عمل نہیں ہوا ہے ۔ تاہم خدمات کو مستقل کرنے کے دوران کسی سے نا انصافی نہیں کی جائے گی ۔ انہوں نے رول آف ریزرویشن پر عمل آوری کے معاملے میں تجاویز پیش کرنے کا مجلس کے قائد مقننہ اکبر الدین اویسی کو مشورہ دیا ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ آئندہ جو بھی تقررات ہوں گے وہ مستقل ہوں گے دوبارہ کنٹراکٹ یا آوٹ سورسنگ پر تقررات نہیں کئے جائیں گے ، اگر کسی ڈپارٹمنٹ میں کیے جائیں گے تو اس کی مدت صرف تین ماہ پر مشتمل ہوگی ۔ ہوم گارڈس کی خدمات کو بھی مستقل کرنے میں قانونی رکاوٹیں پیدا ہورہی ہیں ۔ لہذا انہیں 12 ہزار روپئے تنخواہ دی جارہی ہے ۔ محکمہ پولیس کو ہدایت دے دی گئی ہے کہ اگر تقررات کرنا ضروری ہے تو مستقل تقررات کریں کنٹراکٹ و آوٹ سورسنگ سسٹم کو بند کردیا جارہا ہے ۔ چیف منسٹر کے سی آر نے کہا کہ ہر ایک کو سرکاری ملازمت فراہم کرنا ممکن نہیں ہے ۔ اپوزیشن کی جانب سے انہیں اور وزیراعظم نریندر مودی کو غیر ضروری بدنام کیا جارہا ہے ۔ قائد مجلس مقننہ اکبر الدین اویسی نے کہا کہ جب مختلف محکمہ جات میں کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ پر ایمپلائز کا تقرر کیا گیا تھا تب رولز آف ریزرویشن پر عمل آوری نہیں ہوئی جس سے مسلمانوں کے علاوہ پسماندہ طبقات ایس سی ، ایس ٹی اور بی سی طبقات سے انصاف نہیں ہوا ہے ۔ اگر موجودہ کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ پر خدمات انجام دینے والے ایمپلائز کی خدمات مستقل کی جاتی ہے تو سرکاری ملازمتوں میں مسلمانوں کا تناسب گھٹ جائے گا جس سے ٹی آر ایس حکومت کی نیک نامی متاثر ہوسکتی ہے لہذا وہ چیف منسٹر کے سی آر سے اپیل کرتے ہیں کہ ایسا کوئی طریقہ نکالیں جس سے رولز آف ریزرویشن پر مکمل عمل آوری ہو ۔ تلگو دیشم کے رکن اسمبلی آر کرشنیا نے الیکٹرسٹی ڈپارٹمنٹ میں 22 ہزار کنٹراکٹ ایمپلائز کی خدمات کو مستقل کرنے کے لیے کئے جانے والے اقدامات کی ستائش کرتے ہوئے دوسرے محکمہ جات میں خدمات انجام دینے والے کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ ایمپلائز کی خدمات کو مستقل کرنے کا مشورہ دیا ۔ ریاستی وزیر فینانس ایٹالہ راجندر نے کہا کہ ریاست میں 18181 افراد کنٹراکٹ اور آوٹ سورسنگ کی اساس پر خدمات انجام دے رہے ہیں ۔ حکومت نے 26 فروری 2016 کو جی او ایم ایس نمبر 16 جاری کرتے ہوئے 579 ایمپلائز کی خدمات کو مستقل بنایا ہے ۔ ہائی کورٹ نے عبوری حکمنامہ جاری کیا ہے ۔ جس کی وجہ سے یہ عمل زیر التواء ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT