Sunday , December 17 2017
Home / ہندوستان / کنہیا کمار خلاف جے این یو کی تادیبی کارروائی کالعدم

کنہیا کمار خلاف جے این یو کی تادیبی کارروائی کالعدم

عمر خالد ‘ انیربن بھٹاچاریہ اور دیگر طلبا کو بھی راحت ۔ معاملہ اپیل اتھاریٹی سے رجوع‘ ہائیکورٹ
نئی دہلی 12 اکٹوبر ( سیاست ڈاٹ کام ) جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے سابق طلبا تنظیم صدر کنہیا کمار اور 14 دیگر طلبا کو راحت دیتے ہوئے دہلی ہائیکورٹ نے ان کے خلاف یونیورسٹی کی جانب سے کی گئی تادیبی کارروائی کو کالعدم قرار دیدیا ہے ۔ یہ کارروائی گذشتہ سال فبروری میں منعقدہ ایک تقریب کے سلسلہ میں کی گئی تھی ۔ جسٹس وی کامیشور راؤ نے کہا کہ جواہر لال نہرو یونیورسٹی نے طلبا پر تحدیدات اور پابندیوں سے متعلق جو احکام جاری کئے تھے وہ کسی اصول اور فطری انصاف کو ذہن میں رکھے بغیر جاری کئے گئے تھے ۔ یونیورسٹی کو تمام ریکارڈز کا جائزہ لینے کیلئے بھی بہت کم وقت دیا گیا تھا ۔ یونیورسٹی کو کسی طرح کی تادیبی کارروائی کیلئے ریکارڈز کا تفصیلی جائزہ لینے کی ضرورت تھی ۔ عدالت نے یہ معاملہ ایک بار پھر یونیورسٹی کی اپیل اتھاریٹی کو واپس کردیا ہے جو وائس چانسلر ہیں۔ عدالت نے کہا کہ وائس چانسلر کو چاہئے کہ وہ ہر طالب علم کو ریکارڈز کا جائزہ لینے کیلئے فی کس دو دن اور ان پر عائد کردہ جرمانوں کے خلاف اپیل کرنے کیلئے ایک ایک ہفتے کا وقت دیں۔ اس کے بعد اپیل اتھاریٹی کو چاہئے کہ وہ ہر طالب علم کے جواب کی تفصیلی سماعت کرے ۔ ان کی جانب سے داخل کی جانے والی اپیلوں کا جائزہ لینے کے بعد ایک واجبی حکم جاری کرے اور یہ کام جتنا ممکن ہوسکے جلدی کیا جانا چاہئے ۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ ترجیحی اساس پر یہ کام آئندہ چہ ہفتوں میں کرلیا جانا چاہئے ۔ عدالت نے یہ بھی واضح کیا کہ طلبا کو عدالت میں پہلے داخل کرنا اپنے حلفناموں کا پابند رہنا ہوگا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ وہ مستقبل میں اس مسئلہ پر نہ کوئی ہڑتال کرینگے اور نہ کوئی دھطرنا منظم کرینگے ۔ اس وقت تک جب تک کہ اس مسئلہ پر دونوں فریقین کے مابین یکسوئی نہیں ہوجاتی ۔ عدالت کی جانب سے یہ رولنگ طلبا کی درخواست پر کیا گیا ہے ۔ درخواست داخل کرنے والے طلبا میں کنہیا کمار کے علاوہ عمر خالد اور انیربن بھٹاچاریہ بھی شامل تھے ۔ ان کا ادعا تھا کہ جواہر لال نہرو یونیورسٹی نے انہیں اپنے آپ کے دفاع میں کچھ بھی کرنے کا موقع نہیں دیا تھا اور نہ ہی انہیں ان کے خلاف عائد کردہ الزامات کے ریکارڈز کا جائزہ لینے کیلئے ہی کچھ گھنٹوں کا وقت دیا گیا ۔ طلبا کے خلاف یونیورسٹی کی جانب سے ڈسیپلن شکنی کے الزامات بھی عائد کیا گیا تھا اور بعض طلبا کو کچھ وقت کیلئے معطل بھی کیا گیا تھا ۔ اپیل اتھاریٹی نے عمر کو جے این یو سے ایک سمسٹر کیلئے اور انیربھن بھٹاچاریہ کو 15 جولائی تک کیلئے معطل کردیا گیا تھا ۔ کنہیا کمار پر دس ہزار روپئے کا جرمانہ بھی عائد کیا گیا تھا اور الزام تھا کہ وہ 9 فبروری 2016 کو منعقدہ تقریب کے منتظمین میں سے ایک تھے ۔

TOPPOPULARRECENT