Monday , December 11 2017
Home / سیاسیات / کنہیا کمار کی صورت میں مودی کی ٹکر کا فرد مل گیا ‘ نین تارا سہگل

کنہیا کمار کی صورت میں مودی کی ٹکر کا فرد مل گیا ‘ نین تارا سہگل

رہائی کے بعد کی تقریر اور انٹرویوز کی ستائش ۔ سارے ملک میں تہلکہ مچ گیا۔ مصنفہ کی کتاب کی رسم اجرا تقریب سے خطاب
نئی دہلی 7 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) وزیر اعظم نریندر مودی کو کنہیا کمار میں اپنی ٹکر کا آدمی مل گیا ہے ۔ معروف مصنفہ نین تارا سہگل نے آج یہ بات کہی اور انہوں نے جے این یو طلبا تنظیم کے صدر کی جیل سے رہائی کے بعد کی گئی تقریر اور پھر ما بعد انٹرویوز پر ستائش کی ہے ۔ نین تارا نے راج موہن گاندھی کی نئی کتاب کی رسم اجرا کے موقع پر خطاب میں یہ بات کہی ۔ انہوں نے کہا کہ کنہیا کمار نے نہ صرف جیل سے رہائی کے بعد اپنی تقریر کے ذریعہ بلکہ بعد میں میڈیا کو دئے گئے انٹرویوز کے ذریعہ سارے ملک میں ہلچل پیدا کردی ہے ۔ اس کی تقریر میں بھی جوش و جذبہ تھا ۔ اس نے اپنی تقریر اور انٹرویوز میں نپی تلی باتیں کی ہیں اور حقائق کو پیش نظر رکھا ہے ۔ نین تارا سہگل نے کہا کہ ہمیں کنہیا کمار کا شکر گذار ہونا چاہئے کہ اس نے ہمیں اس ڈپریشن سے باہر نکالا ہے جس میں ہم میں سے اکثر کچھ وقت کیلئے کھو گئے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ نریندر مودی کو کنہیا کمار میں اپنی ٹکر کی آدمی مل گیا ہے ۔ نین تارا سہگل نے کہا کہ راج موہن گاندھی کی کتاب ملک کے بانیوں پر کی جانے والی تنقیدوں کا جواب ہے ۔ ملک کے بانیوں پر دو افراد گجرات کے سوامی سچیدانند اور امریکہ کے مارکسسٹ اسکالر پیری اینڈرسن نے کی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مصنف نے اپنی کتاب میں مدافعانہ انداز اختیار کیا ہے اور ہندوستان وہ نہیں ہے جو اینڈرسن نے کہا ہے اور ہم ہندوستانی چیزوں کو ویسا نہیں دیکھتے جیسا سچیدانند سوچتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے عوام کو جارحانہ ہونا چاہئے خاص طور پر موجودہ صورتحال میں کیونکہ آج ہماری حالیہ تاریخ کے حقائق کو بالکلیہ طور پر غلط پیش کیا جا رہا ہے اور تعلیم اور کلچر میں بھی حقائق کو توڑا مروڑا جا رہا ہے ۔ یہ دونوں شعبہ جات ہماری موجودہ حکومت کیلئے میدان جنگ بن گئے ہیں۔ نین تارا سہگل پنڈت جواہر لال نہرو کی بھانجی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آج کے وقت اور دور میں ہر وہ چیز جس کی ہم قدر کرتے ہیں ‘ ہندوستان کے بحیثیت مجموعی معنی اور جو کچھ برسوں سے ہندوستان رہا ہے وہ خطرہ میں ہے اور ہمیں جارحانہ تیور اختیار کرنے کی ضرورت ہے ۔ ہر کسی کو اس کے خلاف آواز بلند کرنے کی ضرورت ہے ۔ ہم کو خود کوکسی سے وضاحت کرنے کی ضرورت نہیں ہے ۔
کنہیا کمار عمر خالد اور انیربن کی رہائی کیلئے جدوجہد کی قیادت کرینگے
نئی دہلی 7 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) جے این یو طلبا تنظیم کے صدر کنہیا کمار یونیورسٹی کے دو طلبا عمر خالد اور انیربن کی رہائی کیلئے تحریک کی قیادت کرینگے جو غداری کے الزامات میں ہنوز جیل میں ہیں۔ کنہیا نے کہا کہ پولیس اور حکومت کی جانب سے روکاٹیں پیدا کئے جانے کے باوجود وہ عدالت سے ضمانت حاصل کرچکے ہیں لیکن ابھی عمر اور انیربن کو رہا کیا جانا ہے اور اب وہ طلبا کی جدوجہد کی قیادت کرینگے ۔ کنہیا نے کہا کہ حالانکہ ان کی اصل توجہ دو طلبا کی رہائی ہے لیکن ایک بات وہ یقین سے کہہ سکتے ہیں کہ اگر ہماری آواز بلند کرنے کے نظریہ پر وہ عمل کرتے رہے تو پھر یہ جیلوں کو آنا جانا اب لگا رہے گا ۔ کنہیا کو 18 دن کی حراست کے بعد گذشتہ ہفتے رہا کیا گیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT