Thursday , January 18 2018
Home / Top Stories / کوئلہ بلاکس الاٹمنٹ اسکام ‘ سابق چیف منسٹر جھارکھنڈ مدھو کوڈا کو 3 سال قید کی سزا

کوئلہ بلاکس الاٹمنٹ اسکام ‘ سابق چیف منسٹر جھارکھنڈ مدھو کوڈا کو 3 سال قید کی سزا

نئی دہلی 16 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) سابق چیف منسٹر جھارکھنڈ مدھو کوڈا اور سابق سکریٹری کوئلہ ایچ سی گپتا کو آج ایک کوئلہ اسکام مقدمہ میں خصوصی عدالت نے تین سال قید کی سزا سنائی ۔ عدالت نے کہا کہ معمول کے جرائم سے سفید پوش جرائم سماج کیلئے زیادہ خطرہ ہیں۔ جھارکھنڈ کے سابق چیف سکریٹری اے کے باسو اور سابق چیف منسٹر کے ایک قریبی ساتھی وجئے جوشی کو بھی بدعنوانیوں میں ملوث رہنے اور کوئلہ بلاکس الاٹمنٹ کیلئے مجرمانہ سازش رچنے کے الزام میں تین سال قید کی سزا سناء یگئی ہے ۔ یہ مقدمہ جھارکھنڈ سے کولکتہ میں کام کرنے والی ونی آئرن اینڈ اسٹیل ادیوگ لمیٹیڈ کو کوئلہ بلاکس الاٹمنٹ میں بے قاعدگیوں سے متعلق ہے ۔ خصوصی سی بی آئی جج بھرت پراشر نے کوئلہ بلاکس الاٹمنٹ سے استفادہ کرنے والی کمپنی پر 50 لاکھ روپئے ‘ مدھو کوڈا پر 25 لاکھ روپئے اور ایچ سی گپتا پر ایک لاکھ روپئے جرمانہ بھی عائد کیا ہے ۔ جوشی پر 25 لاکھ روپئے اور باسو پر ایک لاکھ روپئے جرمانہ بھی عائد کیا گیا ہے ۔ عدالت نے اپنے فیصلہ میں کہا کہ سفید پوش جرائم سماج کیلئے معمول کے جرائم سے زیادہ خطرناک ہیں۔ پہلی وجہ یہ کہ معاشی نقصانات بہت زیادہ ہیں اور دوسری وجہ یہ کہ اس سے عوام کے حوصلے متاثر ہوتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ معمول کے جرائم جیسے رہزنی ‘ نقب زنی وغیرہ سے ہونے والے نقصانات چند ہزار کے ہوتے ہیں لیکن سفید پوش جرائم سے نہ صرف لاکھوں میں بلکہ کروڑہا روپئے کے نقصانات ہوتے ہے۔ جج بھرت پراشر نے مزید کہا کہ سزا یافتہ افراد کو پروبیشن کے فائدہ دینے کی بھی ضرورت نہیں ہے ۔ ملزمین کو تاہم دو ماہ کیلئے ضمانت قبل از گرفتاری دیدی گئی ہے تاکہ وہ اس فیصلے کو چیلنج کرنے کیلئے دہلی ہائیکورٹ میں اپیل دائر کرسکیں۔ آج سزا سنائے جانے کے بعد اب مدھو کوڈا 2013 میں سنائے گئے سپریم کورٹ کے ایک فیصلے کے مطابق انتخابات میں حصہ نہیں لے سکتے ۔ تا حال خصوصی عدالت نے کوئلہ بلاکس الاٹمنٹ کے 30 کے منجملہ چار مقدمات کی یکسوئی کردی ہے ۔ ان میں آج ہوا فیصلہ بھی شامل ہے اور اب تک 12 افراد اور چار کمپنیوں کو ذمہ دار قرار دیا گیا ہے۔
عدالت میں فیصلہ سنائے جانے کے بعد کوڈا نے کہا کہ انہیں افسوس ہے کہ وہ اپنی بہترین کوششوں کے باوجود اپنے بے گناہی ثابت نہیں کرپائے ہیں اور وہ اس حکمنامہ کی نقل حاصل کرنے اور اپنے وکلا سے مشاورت کے بعد ہائیکورٹ سے رجوع ہونگے ۔ ان پر 25 لاکھ روپئے جرمانہ عائد کئے جانے سے متعلق انہوں نے کہا کہ ان کے بینک اکاؤنٹس منجمد کردئے گئے ہیں اور انہیں جرمانہ کی رقم قرض حاصل کرنی پڑے گی ۔ انہوں نے کہا کہ وہ اپنی بے گناہی کا دعوی کرچکے ہیں ۔ انہیں آج کے فیصلے پر افسوس ہے اور انہیں اس فیصلے کا جائزہ لینے اور اپنے وکلا سے مشاورت کے بعد ہائیکورٹ سے رجوع ہونا پڑے گا ۔

TOPPOPULARRECENT