Saturday , November 25 2017
Home / جرائم و حادثات / کوریئر بوائے کو لڑکی سے چھیڑ چھاڑ پر دو دن جیل

کوریئر بوائے کو لڑکی سے چھیڑ چھاڑ پر دو دن جیل

ایک طالب علم کو کالج کی ساتھی کو ہراساں کرنا مہنگا پڑا، شی ٹیم کی کارروائیاں
حیدرآباد۔ 12 مئی (سیاست نیوز) حیدرآباد سٹی پولیس کی شی ٹیم نے شہر میں پھر ایک مرتبہ خواتین سے چھیڑ چھاڑ اور ہراساں کرنے والے پانچ افراد کو گرفتار کرلیا اور عدالت نے انہیں جیل کی سزا سنائی گئی۔ پہلے واقعہ میں ریشم باغ گولکنڈہ کے ساکن محمد مسیح الدین جو ایک مشہور آن لائن شاپنگ ویب سائیٹ کے لئے کوریئر بوائے کی حیثیت سے ملازمت کیا کرتا تھا اور آن لائن آرڈر کرنے والے گاہکوں کو پارسل پہنچایا کرتا تھا۔ مسیح الدین اپنی کمپنی کا موبائل فون اور سم کارڈ استعمال کیا کرتا تھا اور گاہکوں سے اس فون کے ذریعہ ربط کیا کرتا تھا۔ اسی دوران مسیح الدین نے ایک لڑکی کا نمبر حاصل کرلیا اور بعدازاں اس سے دوستی کرنے کی غرض سے چیاٹنگ کی کوشش کی اور لیکن کے انکار پر وہ دھمکی دینے لگا۔ کوریئر بوائے کی مسلسل ہراساں سے تنگ آکر لڑکی نے اپنے واٹس ایپ اکاؤنٹ کے ذریعہ  شی ٹیم سے شکایت کی جس کے نتیجہ میں سب انسپکٹر وینکٹیش نے اپنی ٹیم کے ہمراہ اس سلسلے میں تمام ثبوت اکٹھا کرنے کے بعد محمد مسیح الدین کو گرفتار کرلیا اور اسے عدالت میں پیش کیا گیا جہاں پر اسے دو دن کی جیل کی سزا سنائی گئی۔ اسی قسم کے ایک اور واقعہ میں کے نریندر نے ساکن شنکر نگر اعظم پورہ ، فلک نما رعیتو بازار کے قریب حالت ِ نشہ میں ایک خاتون سے چھیڑ چھاڑ کی جس کی شی ٹیم نے مکمل ویڈیو گرافی کی اور بعدازاں اسے گرفتار کرلیا گیا۔ شی ٹیم نے نریندر کو عدالت میں پیش کیا اور ویڈیو ریکارڈنگ ثبوت کی بنیاد پر مجسٹریٹ نے اسے دو دن کی جیل کی سزا سنائی اور جرمانہ بھی عائد کیا۔ شی ٹیم کی مزید کارروائی میں 22 سالہ محمد عبدالقدیر ساکن بڑا بازار یاقوت پورہ ایک خاتون جو اس کی دوست تھی، کا ناجائز فائدہ اٹھاتے ہوئے اس کی تصاویر اور ویڈیو افشاء کرنے کی دھمکی دیتے ہوئے اسے ہراساں کررہا تھا۔ خاتون نے شی ٹیم سے شکایت کی جس کے نتیجہ میں اسے گرفتار کرلیا گیا۔ گرفتار عبدالقدیر کو تین دن کی جیل کی سزا سنائی گئی۔ شی ٹیم نے 24 سالہ ارون کمار اپنے والد کے دوست کی لڑکی کو ہراساں کررہا تھا جبکہ سابق میں اسے چھتری ناکہ پولیس نے کئی مرتبہ اس قسم کی حرکتوں سے باز آجانے کی ہدایت دی تھی لیکن وہ اپنی حرکتوں سے باز نہیں آیا اور لڑکی کو مسلسل پریشان کررہا تھا جس کے نتیجہ میں شی ٹیم نے اسے گرفتار کرکے عدالت میں پیش کیا جہاں پر اسے دو دن کی جیل کی سزا سنائی۔ شی ٹیم نے 24 سالہ طالب علم روی کانت کو اپنے کالج کی ایک دوست کو مسلسل ہراساں و پریشان کرنے کے الزام میں گرفتار کرلیا۔ روی کانت ، لڑکی کے علاوہ اس کے ارکان خاندان کو بھی فون پر دھمکیاں دے رہا تھا۔ شی ٹیم نے اسے گرفتار کرکے عدالت میں پیش کیا اور اسے دو دن کی سزا سنائی۔

TOPPOPULARRECENT