Wednesday , January 24 2018
Home / ہندوستان / کولکتہ میں ڈیڑھ ماہ کے دوران آٹھویں بار ٹیکسیوں کی ہڑتال

کولکتہ میں ڈیڑھ ماہ کے دوران آٹھویں بار ٹیکسیوں کی ہڑتال

کولکتہ۔/18ستمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) بائیں بازو کی حمایت والی یونینوں کی جانب سے طلب کی گئی ہڑتال پر شہر کی ٹیکیسیاں آج سڑکو سے غائب ہوگئیں جس کی وجہ سے دفاتر جانے والوں کے علاوہ ایسے افراد جو طویل مسابقتی سفر کے لئے ریلوے اسٹیشن اور ایر پورٹ جانا چاہتے تھے انہیں بھی ٹیکیسوں کی عدم دستیابی کی وجہ سے شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ شہر کی

کولکتہ۔/18ستمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) بائیں بازو کی حمایت والی یونینوں کی جانب سے طلب کی گئی ہڑتال پر شہر کی ٹیکیسیاں آج سڑکو سے غائب ہوگئیں جس کی وجہ سے دفاتر جانے والوں کے علاوہ ایسے افراد جو طویل مسابقتی سفر کے لئے ریلوے اسٹیشن اور ایر پورٹ جانا چاہتے تھے انہیں بھی ٹیکیسوں کی عدم دستیابی کی وجہ سے شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ شہر کی سڑکوں سے کم و بیش 50ٹیکسیوں کا اچانک غائب ہوجانا کوئی معمولی بات نہیں اور وہ بھی ماہ اگسٹ سے لیکر اب تک آٹھویں بار ایسا ہوچکا ہے۔ نتیجہ یہ ہوا کہ آمدورفت کے دیگر ذرائع جیسے بس ، ٹرام اور میٹرو ٹرینوں میں عوام کا اژدھام جمع ہوگیا۔ مزید برآں بسوں کی بھی قابل لحاظ تعداد چلائی نہیں جارہی تھی جو عام طور پر چلائی جاتی ہے اور مسافرین کو بڑے بڑے بیاگس کے ساتھ سفر کرنے کی اجازت نہیں دی جارہی تھی۔ جس پر کئی مسافرین برہم ہوگئے۔ بس ڈرائیورس اب بھی تہوار کے موڈ میں نظر آرہے ہیں جبکہ بعض ڈرائیورس ایسے ہیں جنہیں معلوم ہوگیا ہے کہ کل یعنی 19ستمبر کو ٹرانسپورٹ کی مکمل ہڑتال ہے لہذا وہ اپنے اپنے آبائی مواضعات روانہ ہوگئے ہیں۔ سی آئی ٹی یو نے دیگر پانچ ٹریڈ یونینوں کے ساتھ مل کر ٹیکسیوں کی غیر معینہ مدت کی اور19ستمبر کو مکمل ٹرانسپورٹ ہڑتال کا اعلان کیا ہے۔ ٹیکسی ڈرائیوروں کے کچھ مطالبات ہیں جن میں کرایوں میں اضافہ اور 450 ٹیکسی ڈرائیورس کے خلاف قانونی کارروائی سے دستبرداری شامل ہے۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی ضروری ہے کہ 7اگسٹ سے وقفہ وقفہ سے ٹیکیسیوں کی اچانک ہڑتال کا سلسلہ جاری ہے۔ ٹیکسی ڈرائیورس یہ بھی چاہتے ہیں کہ اگر وہ کسی مسافر کو اس کی منزل پر لے جانے سے انکار کرتے ہیں تو ان پر 2000 روپئے کے جرمانے کا لزو م برخاست کردیا جائے۔ ٹیکسی کے کرایوں میں 2012 میں نظر ثانی کی گئی تھی اور جب سے اب تک ایندھن کی قیمتوں میں 12گنا اضافہ ہوچکا ہے۔ جب سے اب تک ٹیکسی کرایوں میں کوئی اضافہ نہیں ہوا۔

TOPPOPULARRECENT