Saturday , November 25 2017
Home / شہر کی خبریں / کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی خود تشدد میں ملوث

کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی خود تشدد میں ملوث

ٹی آر ایس حکومت کو مورد الزام ٹھہرانے کی مذمت ، کانگریس قائدین کی تائید شرمناک
حیدرآباد۔ 19مئی (سیاست نیوز) تلنگانہ راشٹریہ سمیتی نے الزام عائد کیا کہ نلگنڈہ کے کانگریس رکن اسمبلی کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی نے تشدد برپا کرتے ہوئے ٹی آر ایس حکومت کو مورد الزام ٹھہرانے کی کوشش کی ہے۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے رکن قانون ساز کونسل کے پربھاکر نے کہا کہ کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی جنہوں نے تشدد کو ہوا دی وہ حکومت کو بدنام کرنے کے لیے من مانی بیانات جاری کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی اور خاص طور پر کومٹ ریڈی کی تاریخ تشدد سے بھری پڑی ہے۔ نلگنڈہ میں وینکٹ ریڈی کے ظلم و تشدد کی کئی داستانیں ہیں۔ پربھاکر نے کہا کہ نلگنڈہ علاقہ میں تقریباً ڈھائی لاکھ ایکڑ اراضی پر موسمبی کی فصل ہوتی ہے۔ کسانوں نے موسمبی کے لیے علیحدہ مارکٹ کا مطالبہ کیا ہے۔ گزِشتہ کئی دہوں سے کسان ہر ایک حکومت سے اپنے مطالبہ کے لیے جدوجہد کررہے ہیں۔ کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی نے کسانوں سے مارکٹ قائم کرنے کا وعدہ کیا تھا لیکن چار مرتبہ رکن اسمبلی منتخب ہونے کے باوجود وہ وعدے کی تکمیل میں ناکام رہے۔ وینکٹ ریڈی ایک مرتبہ ریاستی وزیر کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکے ہیں لیکن انہوں نے کسانوں کے اس مطالبہ پر کوئی توجہ نہیں دی۔ برخلاف اس کے کسانوں نے جب ٹی آر ایس حکومت سے اپنے مسائل کو رجوع کیا تو فوری طور پر ریاستی وزیر ہریش رائو نے موسمبی مارکٹ کی منظوری دی۔ انہوں نے محکمہ آبپاشی کے تحت 12 ایکڑ اراضی فراہم کی اور مارکٹ کی تعمیر کے لیے دیڑھ کروڑ روپئے منظور کئے۔ کسانوں کی درخواست پر حکومت نے متصل علاقہ میں فروٹ مارکٹ کے قیام کا فیصلہ کیا ہے۔ پربھاکر نے کہا کہ 16 مئی کو ریاستی وزراء ہریش رائو اور جگدیش ریڈی موسمبی مارکٹ کا افتتاح کرنے والے تھے۔ افتتاح سے قبل ریاستی وزراء نے بھونگیر اور دیگر علاقوں کے دورے کا منصوبہ بنایا۔ اس بات کی اطلاع ملتے ہی کانگریس کے رکن اسمبلی کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی نے سوریا پیٹ، دیورکنڈہ، منگوڑ، بھونگیر اور دیگر علاقوں سے کانگریس کارکنوں کو جمع کرلیا۔ وزراء کا کسانوں کی جانب سے شاندار استقبال دیکھ کر کانگریس قائد بوکھلاہٹ کا شکار ہوگئے اور منصوبہ بند طریقہ سے تشدد برپا کیا اور وزراء کی آمد سے قبل مارکٹ کمیٹی کا سنگ بنیاد رکھنے کی کوشش کی۔ کومٹ ریڈی کی قیادت میں کانگریس کارکنوں نے 10گاڑیوں کو نقصان پہنچایا۔ ضلع سے تعلق رکھنے والے اہم ٹی آر ایس قائدین کی گاڑیاں بھی نقصان کا شکار ہوئیں اور چھ کارکن شدید زخمی ہوئے۔ انہوں نے کہا کہ مارکٹ کے قیام کے لیے اظہار تشکر کے طور پر ہریش رائو کے اعزاز میں مقامی افراد نے تقریب منعقد کی تھی اور کومٹ ریڈی کے حامی وہاں بھی پہنچ گئے اور بینرس کو پھاڑ دیا۔ انہوں نے کہا کہ رکن اسمبلی خود شخصی طور پر تشدد میں ملوث رہے اور ٹی آر ایس کارکنوں نے انہیں روکنے کی کوشش کی۔ پربھاکر نے اس حرکت کے باوجود کانگریس قائدین اتم کمار ریڈی اور جانا ریڈی کی جانب سے کومٹ ریڈی کی تائید کو شرمناک قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ حقائق جانے بغیر ہی اتم کمار ریڈی، جانا ریڈی اور محمد علی شبیر حکومت کے خلاف بیانات جاری کررہے ہیں۔ کانگریس جس وقت برسر اقتدار تھی اس وقت بھی کانگریس کے ان قائدین کے مظالم کا سلسلہ جاری تھا اور ٹی آر ایس دور حکومت میں بھی وہ اسے جاری رکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کسانوں کے نام پر کسی طرح کے تشدد کی ہرگز اجازت نہیں دیگی۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس قائدین کے لیے عوام سے قریب ہونے کا کوئی موقع نہیں ہے کیوں کہ عوام پارٹی سرگرمیوں سے عاجز آچکے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اس طرح کی سرگرمیوں پر عوام آئندہ انتخابات میں کانگریس کو مناسب سبق سکھائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT