Thursday , November 23 2017
Home / کھیل کی خبریں / کوہلی کی قیادت میں ہندوستان کامیابی کیلئے کوشاں

کوہلی کی قیادت میں ہندوستان کامیابی کیلئے کوشاں

جنوبی افریقہ کے خلاف آج موہالی میں پہلے ٹسٹ کا آغاز
موہالی ۔4 نومبر ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) ٹوئنٹی 20 سیریز اور اس کے بعد ونڈے سیریز میں شکست برداشت کرنے والی ہندوستانی کرکٹ ٹیم کل یہاں طاقتور نظر آنے والی جنوبی افریقی ٹیم کے خلاف شروع ہونے والے پہلے ٹسٹ میں اپنی طاقت اسپین بولنگ کا استعمال کرتے ہوئے کامیابی کی سمت واپسی کیلئے کوشاں ہے ۔ ہندوستانی ٹیم جس نے محدود اوورس کی کرکٹ میں جنوبی افریقہ کے خلاف گھریلو حالات کا فائدہ اُٹھانے میں ناکام رہی ، تو دوسری جانب مہمان ٹیم نے وکٹوں کی مناسبت سے بہتر مظاہرہ کرتے ہوئے ہندوستانی سرزمین پر ریکارڈفتوحات حاصل کی ہیں۔ کل شروع ہونے والے مقابلے میں ہندوستانی ٹیم کی قیادت تبدیل ہوگی اور میزبان ٹیم ویراٹ کوہلی کی سرپرستی میں جب میدان پر اُترے گی تو اسے فاسٹ بولر ایشانت شرما کی خدمات حاصل نہیں رہیں گی کیونکہ ان پر ایک مقابلہ کی پابندی عائد ہے جو دراصل سری لنکا کے خلاف منعقدہ سیریز کے دوران انھیں جارحانہ رویہ کی پاداش میں دی گئی ہے ۔

ان حالات میں ہندوستانی ٹیم زیادہ تر انحصار اپنے اسپین شعبہ پر کرے گی جیسا کہ رویندر جڈیجہ کی واپسی کے علاوہ روی چندرن اشون کی خدمات بھی دستیاب ہیں۔ ٹیم کے نمبر ایک اسپنر تصور کئے جانے والے اشوین جوکہ زخمی ہونے کی وجہ سے گزشتہ چار ونڈے مقابلوں میں شرکت نہیں کرپائے تھے لیکن اُمید کی جارہی ہے کہ وہ کل ٹیم کیلئے اہم کارنامے انجام دیں گے ۔ سری لنکا کے خلاف منعقدہ سیریز میں انھوں نے 20 وکٹیں حاصل کرتے ہوئے ٹیم کی فتوحات میں اہم رول ادا کیا تھا ۔ دوسری جانب حریف ٹیم کے کھلاڑی فاف ڈوپلیسی اور ڈین ایلگر نے اشوین کو ہی ان کی ٹیم کیلئے اصل خطرہ قرار دیا ہے۔ ٹیم کے ڈائرکٹر روی شاستری نے امیت مشرا ، جڈیجہ اور اشوین کی شمولیت کا اشارہ دیاہے ۔ سوراشٹرا کے اسپنر جڈیجہ جنھوں نے گزشتہ سال انگلینڈ کے خلاف اپنا آخری ٹسٹ کھیلا تھا

لیکن رانجی ٹروفی کے چار مقابلوں میں 38 وکٹیں حاصل کرتے ہوئے سلیکٹروں کا اعتماد دوبارہ حاصل کیا ہے ۔ اشوین کی آف اسپین بولنگ مشرا کی لیگ اسپین بولنگ سے حریف ٹیم کو پریشان کرنے کا منصوبہ اختیار کیا جارہا ہے ۔ بیٹنگ شعبہ میں شکھر دھون اور مرلی وجئے اننگز کا آغاز کریں گے ۔ چیتشور پجارا اور روہت شرما کے درمیان قطعی گیارہ کھلاڑیوں میں شمولیت کی مسابقت ہے ۔ دوسری جانب مہمان ٹیم جنوبی افریقہ کو اپنے کپتان ہاشم آملہ کے ناقص فام سے تشویش لاحق ہے جوکہ محدود اوورس کی سیریز میں اپنے معیار کے مطابق مظاہرے نہیں کرپائے ہیں۔ ہندوستان کیلئے سب سے بڑا خطرہ بیٹنگ شعبہ میں ونڈے کے کپتان اے بی ڈی ویلیرس ہوں سے جن کے متعلق ہندوستانی ٹیم کے سابق کپتان سنیل گواسکر نے کہا ہے کہ ڈی ویلیرس اپنی زندگی کے بہترین فام میں ہیں اور جو حریف ٹیموں کیلئے سب سے بڑا خطرہ ثابت ہورہے ہیں ۔

جنوبی افریقہ نے ونڈے کے کپتان ڈی ویلیرس کی تین سنچریوں کی بدولت ونڈے سیریز میں پہلی مرتبہ ہندوستان کو اُسی کی سرزمین پر شکست دی ہے اور اس نے 3-2 کی کامیابی حاصل کی ہے جبکہ ٹوئنٹی 20 میں بھی اس نے 2-0 کی کامیابی درج کی ہے ۔ ڈین ایلگر ، اسٹیان وینڈریل اور فاف ڈوپلیسی میڈل آرڈر میں بیٹنگ شعبہ کی طاقت ہے اور اُمید کی جارہی ہے کہ ٹمبا باؤما سینئر اور تجربہ کار بیٹسمین جے پی ڈومینی کے مقام پر شامل کئے جائیں گے ۔ بولنگ شعبہ میں ڈیل اسٹین اور مورنی مورکل کی رفتار اور ان فام بولر عمران طاہر سے ٹیم کو اُمیدیں وابستہ ہیں۔طاہر جو پہلے برصغیر کی وکٹوں سے بہتر طورپر واقف نہیں تھے لیکن آئی پی ایل میں دہلی ڈیر ڈیولس کی نمائندگی اور محدود اوورس کی سیریز میں بہتر مظاہرہ کے بعد ان کے اعتماد میں کافی اضافہ ہوا ہے۔ موہالی کی وکٹ فاسٹ بولروں کیلئے سازگار تصور کی جاتی ہے لیکن اس پر اسپینرس کیلئے بھی مدد موجود ہے ۔ مقابلے کا آغاز صبح 9:30 بجے ہوگا ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT