Tuesday , April 24 2018
Home / کھیل کی خبریں / کوہلی کی من مانی پر تنقیدوں کا آغاز

کوہلی کی من مانی پر تنقیدوں کا آغاز

 

l اشون اور کمار پر سب سے زیادہ نظر کرم
l بار بار تبدیلی سے کھلاڑیوں کے اعتماد کو نقصان

نئی دہلی ۔19 جنوری (سیاست ڈاٹ کام)مبصرین کو اب ہندوستانی کپتان ویراٹ کوہلی کی کپتانی ہی کھٹکنے لگ گئی۔ کہا جارہا ہے کہ کوہلی اپنی من مانی کررہے ہیں ۔ ان کی ذاتی پسند و ناپسند اور جلدبازی کے سبب ٹیم ہم آہنگ نہیں ہوپارہی۔ رپورٹس کے مطابق کوہلی نے اپنی زیر قیادت 34 مقابلوں میں ہر مرتبہ مختلف کھلاڑیوں کے انتخاب کے ساتھ ٹیم تشکیل دی ہے۔ اعداد وشمارکو بطور ثبوت پیش کرتے ہوئے ’’تبدیلی کے شوقین ‘‘ کوہلی کو یاد دلایا جارہا ہے کہ وہ ٹیم کے انتخاب میں غیرمستقل مزاج ہیں۔ اشون اور بھونیشور کمار پر ان کی خاص نظر کرم ہے۔ انہوں نے اپنے دور قیادت میں سات ٹسٹ میچوں میں کم از کم ایک، 16ٹسٹ میچوں میں دو ، چھ میچوں میں تین، چار ٹسٹ میچوں میں چار اور آسٹریلیا کے خلاف ایڈیلیڈ ٹسٹ میں بطور کپتان اپنے پہلے ٹسٹ میں ایک ٹسٹ میچ میں پانچ کھلاڑیوں قطعی 11 کھلاڑیوں کی ٹیم سے باہر کیا۔ اس دوران ٹیم کو اچھی اوپننگ جوڑی بھی نہیں مل سکی۔ ہندوستان نے سات اوپنرز مرلی وجئے، چتیشور پجارا، کے ایل راہول، شیکھر دھون، پارتھیو پٹیل گوتم گمبھیر اور ابھینو مکند کو آزمایا۔ مستقل اوپنرز مرلی وجئے، لوکیش راہول اور شیکھر دھون فٹنس یا فارم کے مسائل کے سبب ٹیم سے کبھی باہر اورکبھی اندر ہوتے رہے۔ وجئے نے 25 ، راہول 20 اور دھون نے 17ٹسٹ میچز کھیلے۔ کوہلی نے سب سے زیادہ انحصار آف اسپنر روی اشون پر کیا۔ انہوں نے 34 ٹسٹ میچوں میں 33 ٹسٹ کھیلے۔دوسرے ٹسٹ میں جب فاسٹ بولر محمد سمیع شانداربولنگ کرتے ہوئے جنوبی افریقہ کے اہم اور خطرناک ثابت ہونے والے بیٹسمینوں کو پویلین کی راہ دکھا رہے اور ان کے مقابلے میں 5 وکٹیں حاصل کرنے کے امکانات روشن تھے کیونکہ میزبان ٹیم 9 وکٹیں گنواچکی تھی اور آخری جوڑی میدان پر موجود تھی تو اسے موقع پر محمد سمیع کو بولنگ سے روک کر اشون سے بولنگ کروائی تاکہ انکے کھاتہ میں وکٹ آسکے اور نتیجہ ایسا ہی ہوا۔کوہلی کے اس فیصلہ کو بھی شائقین اور مبصرین نے تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔علاوہ ازیں بھونیشور کمار 26 مرتبہ پلیئنگ الیون میں شامل رہے۔ ان کے علاوہ کے ایل راہول اور دھون فی کس6، مرلی وجے، اُمیش یادو اور اِیشانت شرما، پانچ پانچ جبکہ رویندرا جڈیجہ چار مرتبہ خارج ہوئے۔ محدود اوورز کی کرکٹ کے ماہر روہت شرما نے بھی چار مرتبہ ٹسٹ ٹیم میں واپسی کی ۔خیال رہے کہ جنوبی افریقہ کے خلاف سنچورین ٹسٹ اورسیریز ہارنے کے بعد جب کوہلی سے ان کی بہترین ٹسٹ الیون کے بارے میں سوال کیا گیا تو وہ بھڑک اُٹھے تھے۔

TOPPOPULARRECENT