Thursday , June 21 2018
Home / سیاسیات / کیا این سی پی مہاراشٹرا میں بی جے پی حکومت کو بچائیگی ؟

کیا این سی پی مہاراشٹرا میں بی جے پی حکومت کو بچائیگی ؟

ممبئی 9 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) مہاراشٹرا میں قائم نئی بی جے پی حکومت کی جانب سے اسمبلی کے خصوصی اجلاس میں اپنی اکثریت ثابت کرنے کے عمل پر سب کی توجہ مرکوز ہوگئی ہے کیونکہ شیوسینا نے آج انتباہ دیا ہے کہ اگر حکومت اپنی بقا کیلئے این سی پی کی تائید حاصل کرتی ہے تو وہ ( سینا ) اپوزیشن میں بیٹھنے کو ترجیح دیگی ۔ شیوسینا اور بی جے پی کے مابین ت

ممبئی 9 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) مہاراشٹرا میں قائم نئی بی جے پی حکومت کی جانب سے اسمبلی کے خصوصی اجلاس میں اپنی اکثریت ثابت کرنے کے عمل پر سب کی توجہ مرکوز ہوگئی ہے کیونکہ شیوسینا نے آج انتباہ دیا ہے کہ اگر حکومت اپنی بقا کیلئے این سی پی کی تائید حاصل کرتی ہے تو وہ ( سینا ) اپوزیشن میں بیٹھنے کو ترجیح دیگی ۔ شیوسینا اور بی جے پی کے مابین تعلقات میں بگاڑ آج پھر واضح ہوگیا جب مرکزی کابینہ میں توسیع کے موقع پر سینا کے نمائندے نے حلف نہیں لیا اور شیوسینا نے تقریب کا بائیکاٹ کیا ۔ تاہم ایسا لگتا ہے کہ بی جے پی ایوان میں اپنی اکثریت ثابت کرنے کیلئے این سی پی کی تائید حاصل کر لیگی جس نے اشارہ دیا ہے کہ وہ ایوان میں تحریک اعتماد پر رائے دہی کے وقت اقلیتی حکومت کے حق میں ووٹ دے سکتی ہے ۔ اس سے قبل این سی پی نے اعلان کیا تھا کہ وہ رائے دہی کے وقت غیر حاضر بھی رہ سکتی ہے ۔ این سی پی کے 41 ارکان اسمبلی ہیں اور اس نے کسی شرط کے بغیر حکومت کی تائید کا اعلان کیا تھا ۔ شیوسینا کے 288 رکنی اسمبلی میں 63 ارکان اسمبلی ہیں اور وہ دوسری سب سے بڑی جماعت ہے ۔ اب یہ دیکھنا دلچسپ ہوگا کہ بی جے پی کس طرح درکار 145 ارکان کی تائید حاصل کر پائیگی تاکہ وہ ایوان اسمبلی میں 12 نومبر کو اپنی اکثریت ثابت کرسکے ۔

مہاراشٹرا کی نئی اسمبلی کے اجلاس کا کل سے آغاز ہو رہا ہے ۔ ریاستی گورنر سی ایچ ودیاساگر راؤ کل چیواپانڈو گاوٹ کو بحیثیت عبوری اسپیکر اسمبلی راج بھون میں 10 بجے دن حلف دلوائیں گے۔ اسمبلی کی کارروائی کا آغاز 11 بجے دن ہوگا اور پہلے دو دن 13 ویں اسمبلی کے ارکان کی تقریب حلف برداری منعقد ہوگی۔ 12 نومبر کو اسپیکر کا انتخاب ہوگا جس کے بعد فرنویس تحریک اعتماد پیش کریں گے۔ اس دوران کانگریس نے آج کہا کہ وہ اسمبلی میں قائد اپوزیشن کیلئے اپنا ادعا پیش کریگی ۔ ممبئی میں اخباری نمائندوں سے بات کرتے ہوئے شیوسینا سربراہ ادھو ٹھاکرے نے بی جے پی کو این سی پی کی تائید حاصل کرنے کے خلاف خبردار کیا اور کہا کہ اگر این سی پی کی تائید حاصل کی جاتی ہے تو ان کی پارٹی اپوزیشن میں بیٹھے گی ۔ اس طرح دونوں جماعتوں کے مابین لفظی جنگ کا سلسلہ جاری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ دو دن میں بی جے پی سے کوئی اطمینان بخش جواب نہیں ملتا ہے تو ہم اپوزیشن میں بیٹھنے کو ترجیح دینگے ۔

TOPPOPULARRECENT