Friday , September 21 2018
Home / ہندوستان / کیرالا حج کمیٹی کے تعصب کے الزام پر سپریم کورٹ کی مرکز سے جواب طلبی

کیرالا حج کمیٹی کے تعصب کے الزام پر سپریم کورٹ کی مرکز سے جواب طلبی

نئی دہلی 5 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے آج مرکز سے کیرالا حج کمیٹی کی درخواست پر جواب طلب کرلیا جس میں الزام عائد کیا گیا ہے کہ ریاست واری کوٹہ برائے عازمین حج مختص کرنے کی پالیسی تعصب پر مبنی ہے۔ چیف جسٹس دیپک مشرا اور جسٹس اے ایم کھانویلکر اور جسٹس ڈی وائی چندراچوڑ نے مرکزی حکومت سے خواہش کی کہ وہ اِس درخواست پر اندرون دو ہفتے جوابی حلفنامہ داخل کرے۔ مقدمہ کی آئندہ سماعت 30 جنوری کو مقرر کی گئی ہے۔ کیرالا حج کمیٹی نے کہاکہ یونین آف انڈیا نے یو اے ای حکومت کو 1.7 لاکھ عازمین حج ہر سال روانہ کرنے کے لئے اجازت طلب کی ہے۔ مرکزی حکومت نے مسلم آبادی کی بنیاد پر ہر ریاست کے لئے کوٹہ مختص کررہی ہے۔ حج کمیٹی نے بہار کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ 12 ہزار حج نشستیں جملہ 6900 درخواستوں پر مختص کی گئی ہے۔ اس کے بالکل برعکس کیرالا کو95 ہزار درخواستوں پر 6 ہزار نشستیں حاصل ہوئی ہیں۔ قانون داں پرشانت بھوشن کمیٹی کی پیروی کررہے ہیں۔ اُنھوں نے کہاکہ اِس کے نتیجے میں بہار کے ہر درخواست گذار کو حج کے لئے جانے کا موقع ملے گا تاہم کیرالا میں صورتحال ناگوار ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ ایک کل ہند قرعہ اندازی ہونی چاہئے تاکہ کون حج کو جائے گا، اِس کا فیصلہ کیا جاسکے۔ کیرالا حج کمیٹی نے الزام عائد کیاکہ موجودہ پوٹہ نظام تعصب پر مبنی ہے۔

TOPPOPULARRECENT