Thursday , November 23 2017
Home / سیاسیات / کیرالا کانگریس میں ناراض سرگرمیوں میں اضافہ

کیرالا کانگریس میں ناراض سرگرمیوں میں اضافہ

امیدواروں کے انتخاب کے عین وقت پارٹی قائدین میں اختلافات
تھرواننتاپورم 24 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) کیرالا کانگریس کے اندر اختلافات اُبھر کر سامنے آرہے ہیں۔ پارٹی کے کئی قائدین کیرالا پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر وی ایم سدھرن کے خلاف بیانات دے رہے ہیں۔ ان کو حال ہی میں اراضی مسئلہ پر تنقیدوں کا سامنا تھا۔ اس سے ریاست میں کانگریس زیرقیادت یو ڈی ایف حکومت کو پریشانی ہورہی ہے۔ کانگریس قائدین میں اختلافات ایک ایسے وقت پیدا ہورہے ہیں جبکہ پارٹی ہائی کمان کی جانب سے کیرالا کے 16 مئی کو منعقد ہونے والے اسمبلی انتخابات کے لئے کانگریس امیدواروں کا انتخاب پورا کرنا ہے۔ فرنٹ کے حلیف پارٹیوں کے ساتھ نشستوں کی تقسیم کے بارے میں تبادلہ خیال ہورہا ہے۔ اگرچیکہ چیف منسٹر اومن چنڈی، وزیرداخلہ رمیش چنتالا اور سدھیرن نے کہا ہے کہ پارٹی بلاشبہ متحدہ طور پر انتخابی مقابلہ کرے گی۔ کیرالا پردیش کانگریس کمیٹی کے سربراہ نے حکومت کے بعض فیصلوں پر مداخلت کی ہے۔ اراضی الاٹمنٹ مسئلہ پر حکومت کے فیصلوں کی تائید کی گئی پارٹی میں رہ کر قائدین کے ساتھ ان کے فیصلوں کو یکساں قرار دیا گیا۔ سیاسی مبصرین کا نکتہ نظر یہ ہے کہ سدھیرن نے حکومت فیصلوں کی ایک سے زائد مرتبہ مخالفت کی ہے اس کی وجہ سے کانگریس کے اندر ناراضگیاں پیدا ہوئیں۔ وزیر مال ادور پرکاش نے جو خود بھی اراضی اسکام پر تنقیدوں کا شکار ہیں، سوشیل میڈیا پر سدھیرن پر تنقید کی ہے اور ان پر درپردہ تنقید کرتے ہوئے انھوں نے کہا ہے کہ ریاست کے قابل عوام کو یہ محسوس ہورہا ہے کہ جو لوگ صاف ستھرا لباس پہنتے ہیں وہی لوگ بدعنوان ہوتے ہیں۔ میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ کانگریس قائدین میں شدید اختلافات پیدا ہوئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT