Thursday , June 21 2018
Home / دنیا / کیمیکل حملہ کرنے پر امریکہ اور اسرائیل نے شام کی مذمت کی

کیمیکل حملہ کرنے پر امریکہ اور اسرائیل نے شام کی مذمت کی

حکومت شام کی جانب سے حملہ کی تردید
یروشلم ؍ واشنگٹن ؍ بیروت ۔ 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) اسرائیل نے آج شام کو اس کے مبینہ کیمیکل حملوں کیلئے سخت تنقید کا نشانہ ناتے ہوئے اسے انسانیت سوز جرم قرار دیا جو شام نے باغیوں کے قبضہ والے مستقر پر کئے تھے۔ اسرائیل نے بشارالاسد حکومت کو ان حملوں کا ذمہ دار قرار دیا۔ اسرائیل کی وزارت خارجہ سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہیکہ 7 اپریل کو شام نے جس طرح کیمیکل حملے کئے وہ قابل مذمت ہیں۔ یاد رہیکہ صرف ایک سال قبل ہی اسی نوعیت کے کیمیکل حملے خان یونس میں بھی کئے گئے تھے اور اس طرح بشارالاسد حکومت یکے بعد دیگرے انسانیت سوز جرائم کی مرتکب ہورہی ہے۔ دوسری طرف امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے بھی مبینہ کیمیکل حملوں کی مذمت کرتے ہوئے یہ وعدہ کیا کہ اس پر اندرون 48 گھنٹے کوئی جامع فیصلہ کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ فی الحال ہم صورتحال کا گہرائی سے جائزہ لے رہے ہیں۔ انہوں نے اپنے کابینی رفقاء سے کہا کہ اس نوعیت کے حملے کرنے کی اجازت نہیں دی جانی چاہئے کیونکہ یہ انسانیت کو شرمسار کرنے والی حرکت ہے۔ اب اگر روس کی بات کہیں تو اس نے شامی ایئربیس پر کئے گئے حملوں کیلئے اسرائیل کو موردالزام ٹھہرایا جس میں 14 افراد بشمول چار ایرانی شہری ہلاک ہوگئے۔ آج کئے گئے میزائیل حملوں کے بارے میں اسرائیل نے کوئی تبصرہ نہیں کیا۔ ٹرمپ نے تو شام کے خلاف امریکہ کی جانب سے فوج کشی کرنے تک کی دھمکی دیدی۔ روس بھی ان حملوں کا برابر کا شراکت دار ہے اور اسے اس کی بھاری قیمت چکانی پڑسکتی ہے۔ اقوام متحدہ میں روس کے سفیر واسیلی نیبنزیا نے واچ ڈاگ ایجنسی سے تعلق رکھنے والے انسپکٹرس کو شام کے دارالخلافہ کا دورہ کرنے کی تجویز پیش کی اور کہا کہ شام میں باغیوں کے قبضہ والے علاقہ کا تفصیلی معائنہ کیا جائے تاکہ کیمیکل حملوں کے بارے میں حقائق کو منظرعام پرلایا جاسکے۔ حیرت انگیز بات یہ ہیکہ حکومت شام کیمیکل حملے کرنے کی تردید کررہی ہے جبکہ آرگنائزیشن فار دی پروہبیشن آف کیمیکل وپنس نے تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT