Thursday , November 23 2017
Home / شہر کی خبریں / کے جی تا پی جی مفت تعلیم منصوبہ پر حکومت کی عمل آوری

کے جی تا پی جی مفت تعلیم منصوبہ پر حکومت کی عمل آوری

اقامتی اسکولس کا قیام ، معیاری تعلیم اور ذاتی عمارتوں کے لیے مساعی ، کڈیم سری ہری
حیدرآباد۔/22ڈسمبر، ( سیاست نیوز) ڈپٹی چیف منسٹر اور وزیر تعلیم کڈیم سری ہری نے بتایا کہ حکومت نے کے جی تا پی جی مفت تعلیم کے منصوبہ پر عمل کرتے ہوئے ریاست میں تعلیمی سال 2016-17 میں اقلیتوں ، ایس سی، ایس ٹی کیلئے اقامتی اسکولس قائم کئے ہیں۔ ایس سی طبقہ کیلئے 103 ، اقلیتوں کیلئے 71 ، قبائیل کیلئے 51 اقامتی اسکولس کا قیام عمل میں آچکا ہے۔ اس کے علاوہ ایس سی طالبات کیلئے 30 اقامتی ڈگری کالجس کو منظوری دی گئی۔ اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران ہنمنت شنڈے اور دیگر ارکان کے سوال پر کڈیم سری ہری نے بتایا کہ حکومت نے تمام اقامتی اسکولس میں تقررات کو پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ انجام دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ ایس سی اقامتی اسکولس کیلئے ٹیچنگ اور نان ٹیچنگ اسٹاف کے بشمول 5315 جائیدادوں کو منظوری دی گئی۔ اقلیتی اقامتی اسکولس کیلئے 2240 اور قبائی بہبود اسکولوں کیلئے  1771 جائیدادوں کو منظوری دی گئی۔ حکومت نے تلنگانہ پبلکس سرویس کمیشن کو سماجی بھلائی اسکولوں میں 1794 اقلیتی اقامتی اسکولس میں 630 اور قبائیلی اسکولس میں 516 جائیدادوں پر تقررات کی تجاویز روانہ کی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ تمام اقامتی اسکولس میں فی الوقت عارضی طور پر آؤٹ سورسنگ اسٹاف کا تقرر کیا گیا ہے اور مستقل تقررات پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ انجام دیئے جائیں گے۔ سری ہری نے بتایا کہ مجموعی  طور پر 487 اقامتی اسکولس قائم کئے گئے اور حکومت کا مقصد ان اسکولوں کے ذریعہ  بنیادی تعلیم کو عام کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ طالبات کی تعلیم پر خصوصی توجہ دی جارہی ہے۔ ہر اسکول کے قیام پر 23 کروڑ روپئے کا خرچ ہوا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ضلع کلکٹرس کو ہدایت دی گئی کہ اسکولوں کیلئے مستقل عمارت کی اراضی کی نشاندہی کریں اور کئی اضلاع میں یہ کام مکمل ہوچکا ہے۔ سری ہری کے مطابق جنوری۔ فبروری تک اراضی کی نشاندہی کا کام مکمل ہوجائے گا اور مارچ میں ٹنڈرس طلب کئے جائیں گے۔ مقررہ وقت پر تعمیر مکمل ہو تو تمام اسکولس آئندہ تعلیمی سال سے مستقل عمارتوں میں کام کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ ابتداء میں پانچویںتا ساتویں کی کلاسیس کا آغاز کیا گیا ہے اور آئندہ تعلیمی سال سے آٹھویں تا دسویں جماعت تک کلاسیس میں توسیع دی جائے گی ۔ انہوں نے کہا کہ تمام اسکولوں کی عمارت کا ڈیزائن یکساں طور پر رہے گا۔ وزیر تعلیم نے کہا کہ آزادی کے بعد سے تلنگانہ میں اقامتی اسکولس کی تعداد 299 تھی لیکن ٹی آر ایس حکومت نے 2 برسوں میں 487 اقامتی اسکولس قائم کئے ہیں جس سے حکومت کی تعلیمی شعبہ میں دلچسپی کا  اندازہ ہوتا ہے۔

TOPPOPULARRECENT